پولیس میں تبادلوں اور  تقرریوں کے اختیارات حاصل کرنے کیلئے سندھ حکومت پرویز مشرف کاقانون نافذ کرنے کیلیے تیار




کراچی – پولیس آرڈر 2002کی بحالی کا بل سندھ اسمبلی میں متعارف کرادیا گیا جمعہ کے روز بل وزیر پارلیمانی امور مکیش کمار چاوٴلہ نے پیش کیا۔ پولیس ایکٹ 1861 منسوخ ہوجائے گا پولیس آرڈر 2002 ،13 جولائی 2011 والی پوزیشن پر بحال ہوجائے گاپولیس آرڈر 2002 کے تحت گریڈ 19 اور اس سے اوپر کے افسران کے تبادلوں و تقرریوں کا اختیار وزیر اعلیٰ کو حاصل ہوگا پورے صوبے میں ایک بار پھر پولیس کے آپریشن اور انویسٹی گیشن کے شعبے الگ الگ ہوجائیں گےاس وقت صرف کراچی میں آپریشن اور انویسٹی گیشن الگ الگ ہیں پولیس آرڈر 2002 کی بحالی اور پولیس ایکٹ 1861 کی منسوخی کا بل مزید غور کیلیے اسمبلی کی سلیکٹ  کمیٹی کے سپرد کردیا گیا ہے سلیکٹ کمیٹی اپنی سفارشات کے ساتھ دوبارہ یہ بل اسمبلی میں پیش کرے گی سلیکٹ کمیٹی حزب اقتدار اور حزب اختلاف کے ارکان پر مشتمل ہے زرائع کا کہنا ہے کہ پولیس آرڈر 2002 میں بعض ترامیم تجویز کی جائیں گی جبکہ پولیس کے عہدوں کے موجودہ نام برقرار رکھے جائیں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں