ناکام معاشی پالیسیوں کی وجہ سے عمران خان اب عوام کے لئے عذاب خان بن چکے ہیں، پیپلزپارٹی کے رہنماوٗں کا داوٗد چورنگی جلسہ میں خطاب

کراچی –  پیپلزپارٹی سندھ کے صدرنثارکھوڑو، صوبائی وزیرسعید غنی ، ناصرشاہ، پیپلزلیبربیورو کے حبیب جنیدی اور دیگررہنماؤں نے کہاہے کہ ناکام معاشی پالیسیوں کی وجہ سے عمران خان اب عوام کے لیے عذاب خان بن چکے ہیں،مہنگائی بیروزگاری بجلی گیس مہنگی ہونے کی وجہ سے اب مخالفین کے جلسوں کی بجائے تحریک انصاف کے جلسوں میں گوعمران گوکے نعرے لگ رہے ہیں پیپلزپارٹی کے رہنماؤں کا کہنا تھا کہ سندھ کی تقسیم کا نعرہ بلند کرکے الطاف حسین کی باقیات لسانی فسادات کی آگ بھڑکانا چاہتی ہے،بانی ایم کیوایم نے ان کے ذہنوں میں جونفرت،تعصب اورملک سے غداری کا زہربھرا تھا وہ آج بھی اس کی باقیات کے ذہنوں میں ہے وہ دل سے نہیں عوام کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کے لیے پاکستان زندہ باد کا نعرہ لگاتے ہیں،بلاول بھٹو ملک کے آئندہ وزیراعظم ہونگے اورپیپلزپارٹی کی منتخب حکومت ہی عوامی مسائل حل کرکے ملک میں معاشی خوش حالی لائے گی۔ان خیالات کا اظہارانہوں نے یوم مزدورکے موقع پر لانڈھی داؤد چورنگی پرپیپلزپارٹی کے تحت منعقدہ جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ پیپلزپارٹی سندھ کے صدرنثارکھوڑو نے کہاکہ پیپلزپارٹی مزدوروں کوسلام پیش کرتی ہے کوئی اورجماعت مزدوروں کے حقوق کے لیے کہیں دکھائی نہیں دے رہی ہے۔


پیپلزپارٹی برسوں سے مزدوروں کے لیے جدوجھد کررہی ہے یہ جماعت کسانوں اورمزدوروں کی جماعت ہے بلاول بھٹو کونوجوان کسان اورمزدورپیارے ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ پیپلزلیبربیورو نے وفاقی اورصوبائی اداروں میں اہم کامیابیاں حاصل کی ہیں محنت کش اورمزدوربلاول کے ساتھ ہیں اس لیے کہ بلاول شہید بے نظیرکا بیٹا ہے ، بی بی شہید کی آنکھ کا تارہ ہے۔ انہوں نے کہاکہ پیٹرول مہنگا ،روپے کی بے قدری کرنے بجلی اورگیس مہنگا کرنے والوں نے عوام پرجوظلم ڈھائے ہیں اب اسکا نام عذاب خان ہوگیا ہے ہم عذاب خان کوبتانا چاہتے ہیں کہ مخالفین تو تم پرتنقید کررہے ہیں مگراب تو  آپ کی اپنی پارٹی میں گوگوعمران گو کے نعرے لگ رہے ہیں جوشرم کا مقام ہے،سوائے بلاول بھٹو کے اب کوئی مسائل حل کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتا عوام کی نظریں اب بلاول پرہیں، بلاول کووزیراعظم بناکرملک کوخوشحال بنائیں گے عوام کویوٹرن خان اورخسرہ وزیراعظم نہیں چاہیئے۔ انہوں نے کاکہ 9 میں جتنی اس حکومت کی تذلیل ہوئی ہے ملکی تاریخ میں کسی کی تذلیل نہیں ہوئی عمران خان کوپتہ ہی نہیں تھاکہ وہ اقتدارمیں آئے گا جب آنکھیں ملتا ہوا اٹھا تو پتہ چلا کہ اقتدارمیں آگیا ہوں۔ عمران خان نے کہاکہ تھا قرضہ لینے کی بجائے خود کشی کرلوں گا میں آج مطالبہ کرتا ہوں کہ اپنی خود کشی کی تاریخ دو،نثارکھوڑونے کراچی کے محنت کشوں کے جلسے کو حکومت کے خلاف ریفرنڈم قراردیا اورکہاکہ وزیراعظم کواب جانےسے کوئی نہیں روک سکتا۔


نثارکھوڑوکی تقریرکے دوران پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری اسٹیج پرپہنچے تو ان کا پرتباک خیرمقدم کیا گیا ۔پیپلزپارٹی کراچی کے صدر صوبائی وزیرسعید غنی نے کہاکہ جب تک کراچی کے لوگوں کے منتخب نمائندوں کو آگے نہیں آنے دیا جائے گا کراچی کے مسائل حل نہیں ہوسکتے،ہم عوام کے ذریعہ اسمبلیوں میں جانا چاہتے ہیں ہم کسی چوردروازے سے ایوانوں میں نہیں جانا چاہتے کراچی کے لوگوں کوووٹ کا آئینی حق اورانتخاب میں مداخلت کے خاتمہ تک کراچی کے مسائل حل نہیں ہوسکتے۔انہوں نے کہاکہ کراچی میں دہشتگردوں نے نیا ڈھونگ پھر شروع کیا ہے جوسندھ میں ایک اورصوبے کی بات کررہے ہیں لگتا ہے کہ بانی ایم کیو ایم نے جولسانیت ان کے ذہنوں میں بھری ہے وہ ان کے ذہنوں سے ختم نہیں ہوئی ہے،بانی ایم کیو ایم نے جونفرت دہشت گردوں کے ذہنوں میں بھری ہے وہ آج برقرارہے بظاہرجوایم کیو ایم کے نفیس لوگ ہیں ان کے ذہنوں میں بھی لسانیت اورنفرت کا وہ زہربھرا ہوا ہے جو الطاف حسین نے ان کے ذہنوں میں بھرا تھا جب تک بانی ایم کیو ایم کی سوچ کا خاتمہ نہیں ہوگا اس وقت تک کراچی سے نفرت کا خاتمہ نہیں ہوگا ۔ سعید غنی نے جلسہ کے شرکائ سے سندھ کوتقسیم نہ کرنے کا عہد لیا اورشرکا سے کہاکہ وہ ہاتھ بلند کرکے ان سے نفرت کا اظہارکریں جو سندھ کوتقسیم کرنے کی بات کررہے ہیں ہم سب زبانوں والے ایسی ظلم کی آواز اور تقسیم کو رد کرتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ماضی میں پیپلز پارٹی کو خوف زدہ کرنے کی کوششیں کی گئیں ماضی میں لوگوں کو مارا، بیروزگار اور تباہ کیا گیا مگر آج وہ کیفیت ختم ہوچکی ہے خدا کی قدرت ہے وہ خوف دلانے والے آج خود خوف کا شکار ہیں،کراچی میں پچھلے تیس سالوں میں لوگوں کو ووٹ نہیں دینے دیا گیا،بدنصیبی کی بات ہے اس شھر میں ظلم و زیادتی کی بات کی جاتی ہے ،حالات تب درست ہونگے جب عوام کوان کے نمائندے منتخب کرنے دیئے جائیں گے،خدا کے لیئے کراچی کے کروڑوں لوگوں پر رحم کیا جائے،ہم نہیں کہتے ہیں پیپلز پارٹی کو جتواؤ،ہم کہتے ہیں کراچی کے لوگوں کو جینے کا اور ووٹ دینے کا حق دیا جائے۔صوبائی وزیرسید ناصرحسین شاہ نے کہاکہ حکومت کی معاشی پالیسیوں کا یہی تسلسل رہا تو معیشت دیوالیہ ہوجائے گی ناکامی حکومت کامقدربن چکی ہے انہوں نے کہاکہ متحدہ قومی موومنٹ پہلے منتشرقومی موومنٹ بنی اب مرحومہ قومی موومنٹ بن چکی ہے انہوں نے پھراپنے مقاصد کے لیے سندھ کی تقسیم کا راگ الاپنا شروع کردیا ہے جنہوں نے بلدیہ کی ایک فیکٹری میں بھتہ کے لیے 250 لوگوں کوجلا دیا انہیں کھلی چھوٹ دی جائے تاکہ یہ بھتے کے لیے پورے کراچی کوجلا دیں یہ جب صوبے کی بات کرتے ہیں تو ان کے ذہنوں میں وہی جناح پورکا نقشہ ہے، یہ دل سے پاکستان زندہ باد کا نعرہ نہیں لگاتے ان کے ذہنوں میں وہی نفرت کا زہربھرا ہوا ہے لسانی تقسیم کے لیے موقع کی تلاش میں ہیں مگرہم ان پرواضح کرنا چاہتے ہیں کہ سندھ میں بسنے والی تمام قومیتیں ان کی سازش ناکام بنائیں گے سندھ کوتقسیم نہیں ہونے دیں گے انہوں نے کہا میں نے اسمبلی میں انہیں کہاکہ آپ نے دل سے پاکستان زندہ باد نہیں کہا بلکہ رینجرکے ٹھاکر نے جب رات بھر تم پرجوتے برسائے توتم نے مارسے بچنے کے لیے پاکستان زندہ باد کا نعرہ لگایا۔انہوں نے کہاکہ وفاقی حکومت کی معاشی پالیسی کے باعث عوام کا جینامحال ہوگیا ہے،آج مزدور کے حالات خراب ہیں،عمران خان کے لیئے آج چلو بھر پانی میں ڈوب مرنے کا دن ہے ، عمران خان نے کہا قرض نہیں لیں گے مگر کشکول ہرجگہ جارہا ہے آج آئی ایم ایف کے پاس بھی جارہے ہیں،آج سونامی کی تباہی کے اثرات مرتب ہورہے ہیں ۔ سابق وفاقی وزیر این ڈی خان نے اپنے خطاب میں کہاکہ ملک کے اگلے وزیراعظم بلاول بھٹو زرداری ہوں گے۔ انہوں نے کہاکہ آج ملک میں ایسی حکومت ہے جس کا نہ منشور ہے نہ پالیسی ہے ملک کے مسائل کا حل کسی کے پاس نہیں اگر حل ہے تو پیپلز پارٹی کے پاس ہے،وقت آگیا ہے جس مزدور دوست منشور کو بھٹو نے شروع اور محترمہ نے عمل کرکے دکھایا،ان حالات میں ملک کا مستقبل بلاول بھتر کرسکتے ہیں اور آنے والے دنوں میں وزیراعظم بلاول بنے گا۔ پیپلزپارٹی سندھ کے سیکریٹری جنرل وقارمہدی نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ پیپلز پارٹی نے کراچی سے کشمور تک تاریخی جلسے کیئے کراچی کی جلسیوں میں بڑی باتیں کی گئیں ایک تنظیم نے بلدیہ میں 259 انسانوں کو بھتے کے لیئے جلایا،بھتہ نہ ملنے پر کراچی میں امن کو خراب کیا گیا، کراچی والوں کو بتایا جائے مشرف کے دور میں تین سو ارب ملے کہاں گئے،پیپلز پارٹی نے جو کام کیئے وہ نظر آرہے ہیں،سینٹرل، سائوتھ اور کورنگی میں کس نے کام کرائے،تم نے تو صرف پاکستان توڑنے اور سندھ توڑنے کی بات کی،کراچی کے لوگ پاکستان اور سندھ سے محبت کرتے ہیں،اسٹیل مل، پورٹ قاسم کس نے بنایا روزگار کس نے دیئے یہ سب پیپلز پارٹی نے کام کیئے،پیپلز پارٹی سندھ کا تحفظ کرے گی اور بلاول ملک کے وزیر اعظم بنیں گے۔ پیپلزپارٹی کے قادر پٹیل نے کہاکہ ملک میں عجیب حکومت تھوپ دی گئی ہے،جتنے اس حکومت نے قرضے لیئے اتنے ملک کی تاریخ میں نہیں لیئے گئے پہلے ایک بھٹو نے ملک کو دلدل سے نکالا اب بلاول نکالے گا۔ انہوں نے کہاکہ اسمبلی ہو یا جلسہ ایک ہی تقریر ہے جو حکمران عوام کو کیسٹ کی طرح سنا رہے ہیں،حکمرانو آئو اسمبلی میں کوئی قانون سازی کرو کوئی عوام کی فلاح کا کام کرو،ایک محلہ کمیٹی موومنٹ جن کو جب مارپڑنے کا وقت آتا ہے تب وہ لوگوں کو لڑانے کی باتین کرتے ہیں،ہم عہد کرتے ہیں اس بھٹو کی اور سچل کی دھرتی کو کبھی تقسیم نہیں ہونے دیں گے۔ انہوں نے کہاکہ بلاول بھٹو نے وزیراعظم کو اسمبلی کاگھوسٹ ملازم قراردیا،نیازی تمہارے پاس ایک جواب نہیں پچھلےدروازےسےبھاگناپڑےگا،بلاول بھٹو اور اسکےجیالے اسمبلی میں ہیں وزیراعظم ایوان میں آنے سےخوفزدہ ہے۔ صوبائی وزیرامتیازشیخ نے کہاکہ جلسیاں کرنے والے بڑھکیاں نہ مارو آؤ، دیکھو اور سیکھو ، جلسے کیسے ہوتے ہیں۔ وزیراعلی سندھ کے میشرراشد ربانی اپنے خطاب میں کہاکہ بھٹو شھید نے ملک کے مزدور کو تحفظ دیا اور جاگیردارانہ نظام کو ملک کے لیئے ناسور قرار دیا،بھٹو شھید مساوات کے علمبردار تھے انہوں نے مزدور کو ملک کی ریڑھ کی ہڈی قرار دیا،ہمارا خدا، رسول ملک ایک ہے تو قائد بھی ہمارا ایک ہے۔



پیپلزپارٹی کراچی کے سیکریٹری جنرل جاوید ناگوری اورراجہ رزاق نے اپنے خطاب میں کہاکہ سلیکٹڈ وزیر اعظم معیشت کو تباہ اور غربت کے بجائے غریب کا خاتمہ کرنے میں مصروف ہیں جاوید ناگوری نے کہاکہ دورہ ایران میں ملک کے خلاف بیان سے وزیراعظم کی نااہلی ثابت ہوگئی ہے۔صوبائی وزیرمرتضی بلوچ نے اپنے خطاب میں مزدوروں کو سرکاری کوراٹرز کی چابیاں دینے کا بھی اعلان کیا انہوں نے کہاکہ 350 مزدوروں کے بچے ڈاکٹر اور انجنیئر ایک بچہ پی ایچ ڈی کررہا ہے ایک سو دس بچوں کو وضائف دے کر تعلیم کی سہولت بھی دی جارہی ہے، انہوں نے کہاکہ محترمہ بینظیر نے ملیر ضلع بناکر علاقے کو تحفہ دیا مگر مشرف دور میں سٹی حکومت سے ملادیا گیا،ملیر کے سٹی حکومت میں شمولیت سے ہمارے روزگار پر اثرات مرتب ہوئے پیپلزپارٹی کی حکومت نے کراچی سے خیرپور تک اسپتال دیئے ولیکا میں ہزاروں روپے کے خرچ پر سی ٹی اسکین کی سہولت مہیا کی گئی ہے۔پیپلزپارٹی کے رکن قومی اسمبلی آغا رفیع اللہ نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ آج مزدوروں کے لئے خوشی کا دن ہے۔پیپلزپارٹی مزدوروں کو ہی مزدوروں کا نمائندہ مقرر کرتی ہے۔مزدور ہی مزدور کا دکھ درد سمجھ سکتا ہے۔انہوں نے کہاکہ پیپلزپارٹی نے عوام کو طاقت کا سر چشمہ قرار دیا ہے۔موجودہ حکومت کا نہ کوئی ویژن ہے نہ پالیسی ہے۔پیپلز لیبر بیورو سندھ کے صدر حبیب جنیدی نے جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ محنت کشوں کی سب سے بڑی پارٹی پیپلز پارٹی ہے،ملک کی پہلی خاتوں وزیر اعظم کو اگر قتل کیا گیا تو وہ مزدور اور غریب کی خدمت کے باعث کیا گیا۔ پیپلزپارٹی کے منوروسان نے کہاکہ پیپلزپارٹی کراچی میں مظبوط ہورہی ہے کبھی اٹھارویں ترمیم کے خاتمہ کی بات کی جاتی ہے اورکبھی سندھ کی تقسیم کی،سندھ کی تقسیم کا خواب دیکھنے والوں کوبتانا چاہتا ہوں کہ سندھ ہماری ماں ہے اورکوئی ماں کا لعل سندھ کوتقسیم نہیں ہونے دے گا پیپلزپارٹی کا بچہ بچہ سندھ کا دفاع کرے گا۔ انہوں نے کہاکہ وفاقی کی مشیراطلاعات کہتی ہے کہ بلاول کرپشن کے پیسوں سے پڑھا ہے میں ان سے پوچھتا ہوں کہ تم بھی تو پیپلزپارٹی میں تھیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں