درجنوں پیشہ ور بھکاریوں کے بجائے ایک کو خود کفیل بنائیں




 

طبقاتی تقسیم سرمایہ درانہ نظام کا بھیانک ہتھیار ہے یہ سماج کو بے حسی کا شکار کرتاہے . تصاویر کے تخلیق کار اور نقاد عوام سے خوب داد تحسین حاصل کرتے ہیں میں ان تصاویر کو بچپن سے انقلابی رہنماؤں کے ہاتھوں اور دفاتر میں دیکھ رہا ہوں اب انھوں نے بہت ترقی کرلی ہے . مگر سماج میں کوئی تبدیلی تو دور کی بات ان میں سے کسی نے انفرادی طور پر بھی کیا کسی کی زندگی تبدیل کرنے کی کوشش نہیں کی یہ بھیانک سماجی المیہ ہے اگر کوئی چند افراد یا گروپ ہر سال لوگوں کو زکوات اور خیرات کے بجائے اگر کسی ایک فرد کو خود کفیل بناتے تو الگے سال تک وہ بھی اس سرکل کا حصہ بن کر مزید لوگوں کو خود کفیل بناتے اس طرح ایک سماجی خود کفالت شروع ہو سکتی ہے مگر صاحب حیثیت لوگ کی انا اس بات کی اجازت نہیں دیتی کہ کل کا بھوکا ان کے برابر بیٹھے اس لیئے وہ بھیک دے کر لوگوں کو فقیر بناتے ہیں تاکہ اگلے سال وہ ان سے پھر بھیک مانگنے اور ان کو اللہ کی خوشنودی حاصل ہوجائے مسلہ سوچ کی تبدیلی کا ہے اگر سوچ تبدیل ہوجائے تو سماج خود تبدیل ہو جائے گا صاحب حیثیت لوگوں کو چاہیئے اپنے اردگرد لوگوں کو تلاش کریں اور ان کو بھکاری کے بجائے خود کفیل بنائیں اور اب سوشل میڈیا کادور ہے مہربانی کرکے ان تصاویر کے ساتھ اس سوچ کو فروغ دیں کہ درجنوں پیشہ ور بھکاریوں کے بجائے ایک خود کفیل بنائیں




اپنا تبصرہ بھیجیں