ریحام خان کا وزیراعظم آفس سے سوال – کیا ہم وزیراعظم آفس کو چمڑے کی جیکٹ کے بجائے نقشہ تحفہ میں دے سکتے ہیں؟

وزیراعظم عمران خان کی سابقہ اہلیہ ریحام خان موقع کی تلاش میں رہتی ہیں جیسے ہی انہیں کوئی موقع ملتا ہے وہ عمران خان پر طنز یہ سوال کرتی ہیں قدرت نے انہیں ایک اور موقع ادا کر دیا جب وزیراعظم عمران خان کے دورہ ایران کے دوران کی گئی تقریر میں دوسری عالمی جنگ کا ذکر چھیڑا اور جرمنی اور جاپان کے بارڈر ملنے کی بات کی گئی۔ اس پر وزیراعظم عمران خان کی سابقہ اہلیہ ریحام خان نے سوشل میڈیا پر طنزیہ سوال داغ دیا کہ کیا جرمنی اور جاپان کی سرحدیں ملتی ہیں؟
انہوں نے مزید پوچھا ہے کہ کیا ہم وزیراعظم آفس کو چمڑے کی جیکٹ س کے بجائے نقشہ تحفے میں دے سکتے ہیں؟




واضح رہے کہ وزیراعظم عمران خان کے حالیہ دورے ایران کے دوران یورپی ملک جرمنی اور ایشیائی ملک جاپان کو ہمسایہ ممالک قرار دینے پر سیاستدانوں اور اہم شخصیات کے علاوہ دیگر کا سوشل میڈیا پر رد عمل سامنے آرہا ہے ایران میں دیا گیا وزیراعظم عمران خان کا یہ بیان ٹوئٹر پر ٹاپ ٹرینڈ بن گیا ہے جبکہ انٹرنیٹ پر جرمنی اور جاپان سے متعلق پیغامات کا ڈھیر لگ گیا ہے کہا جا رہا ہے کہ دونوں ملکوں کے درمیان پانچ ہزار پانچ سو میل کا فاصلہ ہے ہیش ٹیگ جرمنی اور ہیش ٹیگ جاپان ٹوئٹر پر ٹاپ ٹرینڈ میں شامل ہیں لوگوں نے دنیا کے نقشے نکال لئے ہیں جس پر جرمنی اور جاپان کے مقام پر سرخ دائرے لگا کر ان کا فاصلہ دکھایا جارہا ہے کسی کا کہنا ہے کہ انہوں نے تو دنیا کا جغرافیہ ہی تبدیل کر دیا ہے صرف نیا پاکستان نہیں بنایا بلکہ نیا جرمنی اور نیا جاپان بھی بنا دیا ہے تبصروں کے اس جنوں میں بلاول بھٹو زرداری اور وزیراعظم کے مشیر برائے میڈیا افتخار درانی بھی کود پڑے ہیں وزیراعظم عمران خان کے حامی اور وزیر اعظم کے سیاسی مخالفین کے درمیان اس معاملے پر تبصروں کا تبادلہ جاری ہے.



اپنا تبصرہ بھیجیں