عمران خان نے دو صوبوں کے وزراء اعلیٰ کو مہذب اور شریف قرار دے دیا … باقی دو کا کیا قصور ہے؟

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ عثمان بوزدار اور محمود خان، مہذب اور شریف وزیراعلیٰ ہیں دونوں پر اعتماد ہے ٹیم کو بھرپور ساتھ دینا چاہیے وزیراعظم کا کہنا ہے کہ معاشی بحران بہت بڑا ہے لوگوں کو اعتراض تھا کہ اسد عمر ماہر اقتصادیات نہیں اب حفیظ شیخ کو لے آئے ہیں انہوں نے ملک کو بحران سے نکالا تھا جبکہ اسحاق ڈار نے چار سال میں معاشی بحران کے سوا ملک کو کچھ نہیں دیا لیکن انہیں نہیں ہٹایا گیا تھا۔ وزیراعظم کا کہنا ہے کہ پانچ سال بعد مجھے بھی عوام کو جواب دینا ہے صحت اور تعلیم میں انقلاب لانا چاہتا ہوں دواؤں کی قیمت میں 300 فیصد اضافہ کردیا گیا جس کا بوجھ عوام پر پڑا اس لیے عامر کیانی کو عہدے سے ہٹایا ہے اب معاون خصوصی کے طور پر صحت کے لیے ظفر اللہ مرزا کو لایا ہوں یہ تجربہ کار ہیں اچھے کام کی توقع ہے وزیراعظم کا کہنا ہے کہ وزیر مشیر اپنی پرموشن پر نہیں عوام کو ریلیف دینے پر توجہ دیں کسی کو مستقل قلم نہیں دیا کسی بھی وقت کسی کو بھی تبدیل کیا جا سکتا ہے.
وزیراعظم کی ان باتوں پر سیاسی حلقوں میں بحث ہو رہی ہے کہ کیا صرف دو صوبوں کے وزیراعلیٰ مہذب اور شریف ہیں باقی دو صوبوں کے وزیراعلیٰ کا کیا قصور ہے ان کے بارے میں وزیراعظم نے کچھ نہیں فرمایا تو انہیں کیا سمجھا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں