صاف چلی شفاف چلی … تحریک انصاف حکومت کے مشیر پیٹرولیم 86 کروڑ کے نادہندہ نکلے

تحریک انصاف کے یہ دعوے دھرے کے دھرے رہ گئے ہیں کہ صاف چلی شفاف چلی… وزیراعظم عمران خان نے کابینہ میں ردوبدل کیا ہے اس کے بعد پیٹرولیم کے نئے معاون خصوصی ندیم بابر کو سامنے لایا گیا ہے وہ 80 کروڑ روپے کے نادہندہ ہیں ان کی کمپنی نے سوئی ناردرن گیس کمپنی کے پیسے دینے تھے ساٹھ روپے ادا نہیں کیے جو سود کے بعد 80 کروڑ روپے سے بھی تجاوز کر چکے ہیں وہ قائد اعظم سولر پارک اور لاہور ویسٹ مینجمنٹ کمپنی کے معاملات میں بھی ملوث بتائے جاتے ہیں ان کی تقرری پر پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما قمرزمان کائرہ Qamar Zaman  Kairaنے بھی سخت تنقید کی ہے جب کہ سینئر صحافی نجم سیٹھی Najam Sethi،  حامد میر Hamid Mir، عبدالمالک Abdul Malik اور کاشف عباسی Kashif Abbasi  نے بھی اس تقرری پر حیرت کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ اب میرٹ کا کیا بنا ۔سینئر صحافی نجم سیٹھی نے اس حوالے سے ٹی وی کے پروگرام میں ندیم بابر  Nadeem Babarکے حوالے سے تفصیلات بیان کی ہیں اور یہاں تک ہے کہ وہ بظاہر اچھے آدمی ہیں قابل آدمی ہیں لیکن انہوں نے ڈیفالٹ کیا ہے ان کی کمپنی نادہندہ ہے انہوں نے پیسے نہیں دیے اور وہ بھی اس وقت جب انٹرنیشنل کورٹ سے ان کے خلاف فیصلہ آگیا ابو کہتے ہیں کہ میں تو کمپنی کا صرف شیئر ہولڈر رہ گیا ہوں کمپنی کی صدارت چھوڑ دی ہے لیکن یہ تو چند مہینے پرانی بات ہے اس سے پہلے تو وہ کمپنی کے معاملات چلا رہے تھے اور کمپنی نادہندہ تھی ۔سینئر صحافی و تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ عمران خان نے ندیم بابر کو کابینہ کا حصہ بنا کر اپنے لیے مزید مشکلات کھڑی کر لی ہیں ا پوزیشن اس معاملے کو مزید اچھا لے گی اور آنے والے دنوں میں یہ معاملہ پاکستان تحریک انصاف کی شفافیت کے معاملات کے حوالے سے سوالیہ نشان بنا رہے گا ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں