فاطمہ جناح روڈ پر 50 سال پرانا درخت کاٹنے پرمیئر کراچی وسیم اختر کا سخت نوٹس، درخت کاٹنے والوں کے خلاف ایف آئی آر درج کرانے کا حکم

کراچی  . تفصیلات کے مطابق منگل کی شام فریئر ہال کے بالمقابل فاطمہ جناح روڈ پر مکان اسٹاف لائن 235 کی فٹ پاتھ پر چند افراد 50 سال پرانا درخت کاٹنے میں مصروف تھے میئر کراچی وسیم اختر اور میٹروپولیٹن کمشنر ڈاکٹر سید سیف الرحمٰن جو اس وقت ڈائریکٹر پارکس کے آفس میں شہر میں درخت لگانے اور پارکوں میں اضافے کے حوالے سے اجلاس ختم کرکے باہر آئے تو درخت کو کاٹتے ہوئے دیکھ کر تشویش کا اظہار کیا اور کہا کہ ہم درخت لگانے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں اور باہر 50 سال پرانا درخت کاٹا جا رہاہے وہ موقع پر پہنچے، مزدوروں نے ان کو بتایا کہ مالک مکان نے درخت کاٹنے کا کہا ہے جس پر میئر کراچی اور میٹروپولیٹن کمشنر نے سخت برہمی کا اظہار کیا اور پارک کے عملے کو طلب کرکے مالک مکان کے خلاف ایف آئی آر درج کرانے کی ہدایت کی اور کاٹے ہوئے درخت کی لکڑی کو ضبط کرلیا، اس موقع پر میئر کراچی وسیم اختر نے کہا کہ فٹ پاتھ پر درخت سرکار کی ملکیت ہے کوئی بھی مکان مالک گھر کے سامنے فٹ پاتھ پر سے درخت نہیں کاٹ سکتا، انہوں نے کہا کہ پہلے ہی شہر میں درختوں کی کمی ہے اگر لوگ گھروں کے سامنے سے درخت لگانے کے بجائے کاٹنے لگیں گے تو شہر میں درختوں کی کمی ہوجائے گی، سرکاری ادارے جو آلودگی کے خاتمے کی کوشش کر رہے ہیں اس میں وہ کبھی بھی کامیاب نہیں ہوسکتے، انہوں نے کہا کہ شہری درختوں کی حفاظت کریں، 50 سال پرانا درخت کاٹنا بہت بڑی زیادتی ہے اتنا بڑا درخت تناور ہونے میں مزید 50سال کا عرصہ درکار ہوگا، ایسے افراد کو معاف نہیں کیاجاسکتا جو درختوں کو بے دردی سے کاٹتے ہیں اور اس پر شرمندہ بھی نہیں ہوتے لہٰذا ذمہ داروں کے خلاف ایف آئی آر درج ہونا چاہئے اگر لوگوں کو درخت کاٹنے کی اسی طرح آزادی دی گئی تو شہر میں ایک درخت بھی باقی نہیں رہے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں