سندھ کے سیکرٹری خوراک لئیق احمد آٹے کی قیمت میں 10 روپے فی کلو کمی کے لیے پرعزم

سندھ کے سیکرٹری خوراک لئیق احمد آٹے کی قیمت میں 10 روپے فی کلو کمی کے لیے پرعزم ۔انہوں نے صوبائی کابینہ کے اجلاس میں یقین دہانی کرائی تھی کہ آنے والے دنوں میں صوبائی حکومت کی جانب سے فلور ملوں کو گندم ریلیز کرنے کا آغاز ہوگا جس کے اثرات مثبت ہوں گے اور آٹے کی قیمت میں نمایاں کمی ہوگی وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے کابینہ کے اجلاس میں منظوری دی تھی کہ جمعے سے فلور ملز کو گندم جاری کر دی جائے اس سلسلے میں محکمہ خوراک کو ہدایت دی گئی تھی صوبائی کابینہ نے سو کلو گرام گندم کی بیک سمیت قیمت 36 سو 87 روپے 50 پیسے مقرر کی تھی اور یہ اندازہ لگایا گیا تھا کہ آٹے کی فی کلو قیمت 57 روپے سے کم ہوکر 47 روپے تک آ جائے گی اس طرح نو سے دس روپے کا ریلیف ملے گا اور عوام کو سستا آٹا فراہم کیا جا سکے گا ۔

سندھ کے سیکرٹری خوراک لئیق احمد نے اس سلسلے میں ضروری تیاری اور اقدامات کرنے کے بعد اس عزم کا اظہار کیا ہے کہ صوبائی کابینہ کے فیصلے کے مطابق اور وزیر اعلی سندھ سید مراد علی شاہ کی ہدایت پر صوبے میں عوام کو سستے آٹے کی فراہمی یقینی بنائی جائے گی اور یقینی طور پر دس روپے فی کلو کمی واقع ہوگی جو عوام کے لیے بڑا ریلیف ہوگا ذرائع کے مطابق صوبائی سیکرٹری خوراک لئیق احمد اور ان کی محکمہ جاتی ٹیم نے اس سلسلے میں فلور ملز ایسوسی ایشن کے عہدے داروں اور دیگر متعلقہ حکام سے رابطے ملاقاتیں کی ہیں اور اس بات پر اتفاق کیا گیا ہے کہ جمعے سے گندم ریلیز کرنے کا عمل شروع ہوگا جس کے نتیجے میں آٹے کی قیمت میں 10 روپے تک فی کلو کمی آئے گی آئندہ ہفتے سے عوام کو اس کے مثبت اور عملی نتائج نظر آئیں گے یہ بات قابل ذکر ہے کہ بھائی محکمہ خوراک کی عمدہ حکمت عملی اور اقدامات کے نتیجے میں سندھ میں گندم کا نہ کوئی بحران ہے نہ قیمت بڑھنے کا خرچہ ہے نہ کسی قسم کا شارٹیج کا خطرہ ہے جب کہ دیگر صوبوں میں صورتحال سندھ سے مختلف ہے ذرائع کے مطابق ٹی سی پی کے ذریعے خیبرپختونخوا کو مطلوبہ گندم اور آٹا فراہم ہو گیا ہے اس لیے اب وہاں پر کوئی بحران نہیں ہوگا جبکہ پنجاب میں صورتحال مختلف ہے ذرائع کا کہنا ہے کہ افغانستان اسمگلنگ کی وجہ سے صورتحال پنجاب اور خیبرپختونخوا میں تشویش ناک تھی لیکن اب وہاں پر اقدامات کیے گئے ہیں اور صورتحال بہتر ہورہی ہے لیکن اگلے سیزن کے لیے ابھی سے گندم کی فصل پرائز کا اعلان ہو جائے تو بہتر ہے تاکہ کسان زیادہ پر کشش ترغیبات کے نتیجے میں بہتر فصل حاصل کرنے کے لیے ابھی سے تیاری کریں اور اگلے سیزن میں اس کے مثبت نتائج آئیں ۔ماہرین کا کہنا ہے کہ کراچی میں پاسکو کے پاس سندھ کی جو گندم موجود ہے اسے پنجاب میں کاشت کرانے میں استعمال کرنا چاہیے اس کے نتیجے میں بہتر فصل آئے گی ۔