پاکستان میں بجلی صارفین کو دو دہاری تلوار سے کاٹا جا رہا ہے

پاکستان میں بجلی صارفین کو دو دہاری تلوار سے کاٹا جا رہا ہے ۔
بجلی مہنگی کرنے اور اوور بلنگ کے ذریعے مسلسل لوٹا جا رہا ہے ۔
بجلی کی چوری، طلب میں کمی کا ملبہ عوام پر ڈالا جا رہا ہے ۔ میاں زاہد حسین

mian zahid hussain business man fpcci chairman
( 14ستمبر2020)

پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فور م وآل کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدر اور سابق صوبائی وزیر میاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ پاکستان میں بجلی کے صارفین کو دو دہاری تلوار سے کاٹا جا رہا ہے ۔ ایک طرف تو بجلی انتہائی مہنگی کرنے کا سلسلہ جاری ہے جبکہ دوسری طرف اوور بلنگ کے ذریعے انھیں مسلسل لوٹا جا رہا ہے جس نے انکی کمر توڑ دی ہے ۔ حکومت بجلی تقسیم کرنے والی کمپنیوں کی لوٹ مار کا فوری نوٹس لے کر اس سلسلے کو روکے ۔ میاں زاہد حسین نے بزنس کمیونٹی سے گفتگو میں کہا کہ بجلی کا شعبہ روزانہ1 ارب سے زیادہ کا نقصان کر رہا ہے جس میں بڑا حصہ چوری کا ہوتا ہے ۔ پاور ڈسٹری بیوشن کمپنیاں اپنا نظام بہتر بنانے اور چوری و دیگر نقصانات روکنے کے بجائے نقصانات کم کرنے کے لئے اوور بلنگ کا حربہ اختیار کرتی ہیں جس سے عوام پر بوجھ بڑھتا ہے جبکہ کاروباری شعبے اپنی پیداوار اور خدمات کی قیمت بڑھا نے پر مجبور ہو جاتے ہیں ۔ کاروباری برادری کےلئے پاکستان میں علاقائی ممالک کے برابر قیمت پر بجلی کا حصول ایک خواب بن گیا ہے جس پر کبھی عمل درآمد نہیں ہوتا ۔ انھوں نے کہا کہ پاور ڈسٹری بیوشن کمپنیوں کی منفی پالیسی سے نہ صرف حکومت کا اصلاحاتی ایجنڈا متاثر ہو رہا ہے بلکہ اس سے قوم اور معیشت بھی بری طرح متاثر ہو رہے ہیں ۔ ملک میں بجلی کی طلب پیداوار سے کہیں کم ہے مگر لوڈ شیڈنگ اور بجلی کی آنکھ مچولی ایک معمول بن چکا ہے جبکہ صارفین کے استحصال کا سلسلہ پورے زور و شور سے جاری ہے ۔ یہ کمپنیاں نہ تو اپنی کارکردگی بہتر کر سکی ہیں نہ گورننس کے مسائل حل کر سکی ہیں اور نہ ہی گزشتہ 10سالوں میں نقصانات میں قابل ذکر کمی لا سکی ہیں جبکہ ریکوری کے معاملات بھی انتہائی تشویشناک صورت اختیار کر چکے ہیں جن کا ملبہ بل ادا کرنے والے صارفین پر ڈال دیا جاتا ہے ۔ سکھر ،ملتان، کوءٹہ اور قبائلی علاقوں کو بجلی فراہم کرنے والی کمپنیوں کا حال سب سے برا ہے جہاں لوٹ مار کے نئے ریکارڈ قائم کئے جا رہے ہیں ۔ گزشتہ سال متعلقہ وزارت نے ریکوری میں 15.5 فیصد اضافے کا دعوی کیا جبکہ بجلی کی کھپت میں 2.16 فیصد اضافہ ہوا جس سے اس دعوے کی حقیقت کھل جاتی ہے ۔ گزشتہ سال بجلی کی کھپت میں 2.16 فیصد اضافہ ہوا مگر عوام سے بلوں کی مد میں 13.22 فیصد زیادہ رقم وصول کی گئی جسکی مالیت اربوں روپے ہے ۔ 2015 سے 2017 تک بجلی کی سالانہ طلب میں اوسطاً چھ فیصد اضافہ ہوا جو 2017-18 میں 12.5 فیصد تک جا پہنچا جسکے بعد اس میں زبردست کمی ریکارڈ کی جا رہی ہے ۔ بجلی کی قیمت میں اضافہ اور اوور بلنگ سے اسکی طلب میں کمی فطری امر ہے جو معیشت اور پاور سیکٹر کے لئے نقصان دہ ہے ۔
— —