168 ارب روپے کا کراچی پیکج کتنی حقیقت کتنا فسانہ؟

وزیراعظم عمران خان کی جانب سے 168 ارب روپے کے کراچی پیکج کا اعلان سیاسی حلقوں میں زیر بحث ہے حکومت کے حامی حلقے اسے ایک بہترین اعلان قرار دیتے ہوئے امید کا اظہار کر رہے ہیں کہ اس کے نتیجے میں کراچی میں ترقی و خوشحالی کے نئے دور کا آغاز ہو گا ۔غربت بے روزگاری کے خلاف اقدامات میں مدد ملے گی روکے ہوئے ترقیاتی منصوبے آگے بڑھیں گے کراچی کے شہریوں کو مختلف شعبوں میں ریلیف ملے گا لہذا وزیراعظم کا کراچی پیکج خوش آئند ہے اس کا خیرمقدم کرنا چاہیے ۔
دوسری جانب حکومت پر تنقید کرنے والوں کا کہنا ہے کہ 168 ارب روپے کا کراچی پیکج دراصل ایک سیاسی اعلان ہے اس کے سوا اس کی کوئی حقیقت نہیں ہے وفاقی حکومت کراچی کے لیے فنڈز فراہم نہیں کر رہی جس کی وجہ سے گرین لائن بس منصوبہ رکھا ہوا ہے کراچی سرکلر ریلوے منصوبہ اپنی جگہ پر جوں کا توں ہے کہ فور پانی کی فراہمی کا منصوبہ ٹھپ پڑا ہوا ہے ان سمیت متعدد پروجیکٹ رکھے ہوئے ہیں ۔
غیر جانب دار حلقوں کا کہنا ہے کہ کراچی پیکج کے لیے جس رقم کا اعلان کیا گیا ہے بہتر ہوگا اسے ٹرانسپیرنٹ انداز میں کراچی پر خرچ کیا جائے اور وزیراعظم عمران خان خود اس رقم کے استعمال کی نگرانی کریں عوام کو بھی بتایا جائے کہ کتنا پیسہ کس پروجیکٹ کے لیے کس شعبے کے لیے رکھا گیا ہے اور اسے کس طرح کس کمپنی اور کس ٹھیکے دار کے ذریعہ خرچ کیا جا رہا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں