وزیراعلیٰ سندھ کی ورلڈ بینک کی فنڈنگ سے شہر کے انفراسٹرکچر، برساتی پانی کے نالوں کی تعمیر نو کلئے کاوشیں

وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے ورلڈ بینک کے کنٹری ڈائریکٹر کے ساتھ 143.9 ملین ڈالرز کے ترقیاتی پورٹ فولیو جس میں کراچی کیلئے 35.1 ملین ڈالرز شامل ہیں پر تفصیلی تبادلہ خیال کرتے ہوئے عالمی بینک پر زور دیا کہ وہ شہر کے بارش سے متاثرہ انفراسٹرکچر کی تعمیر نو کلئے صوبائی حکومت کی مدد کرے۔ اجلاس کا اہتمام ویڈیو لنک کے ذریعے کیا گیا۔ ورلڈ بینک کے نئے کنٹری ڈائریکٹر مسٹر ناجے باھلسین اپنی ٹیم کے ہمراہ اسلام آباد سے ہونے والے اجلاس میں شریک ہوئے۔ وزیراعلیٰ سندھ کی معاونت چیئرمین پی اینڈ ڈی محمد وسیم، وزیراعلیٰ سندھ کے پرنسپل سیکریٹری ساجد جمال ابڑو اور سیکرٹری خزانہ حسن نقوی نے کی۔ وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ ماہ اگست کے ایک ہی دن میں کراچی کے اندر 250 ملی میٹر سے زیادہ بارش ہوئی جس نے شہر میں موجود سڑکوں کے نیٹ ورک کو تباہ کرکے رکھ دیا ہے۔لہذا انکی حکومت نے تباہ شدہ روڈ نیٹ ورک کی از سر نو تعمیر کا فیصلہ کیا ہے اور نالوں کے پشتے کے ساتھ قائم تجاوزات کو ختم کرکے تمام برساتی نالوں کو صحیح کرنا ہے۔ وزیراعلیٰ سندھ نے یہ بھی کہا کہ انہوں نے چار اضلاع میرپورخاص، عمرکوٹ، سانگھڑ اور بدین کا دورہ کیا جہاں شدید بارشںی ہوئیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ تیار فصلیں تباہ ہوچکی ہیں اور بارش کے پانی نے بڑی تعداد میں مکانات کو تباہ کردیا ہے۔ انہوں نے کہا ہم نے متاثرہ لوگوں کو عمرکوٹ میں قائم کیمپ میں خیموں میں منتقل کردیا ہے۔ ورلڈ بینک کے کنٹری چیف نے وزیراعلیٰ سندھ کو یقین دلایا کہ وہ کراچی کے بنیادی ڈھانچے کی تعمیر نو کلئے مالی اعانت کے منصوبے پر عملدرآمد کریں گے جس میں برساتی پانی کے نالوں کی تعمیر بھی شامل ہے۔ کنٹری ڈائریکٹر نے وزیراعلیٰ سندھ کو مشورہ دیا کہ وہ اپنے چیئرمین پی اینڈ ڈی کو ضروری دستاویزات کے ساتھ عالمی بینک کی ٹیم کے ساتھ تجویز پیش کرنے کلئے کہیں۔ ورلڈ بینک کے مالی اعانت سے چلنے والے 608.8 ڈالرز کے منصوبے جاری ہیں۔ ان میں 56 ملین ڈالرز کے سندھ کی زرعی ترقیاتی منصوبے شامل ہیں جوکہ 81 فیصد مکمل ہوگئے ہیں۔ سندھ ایگریکلچرل پروڈکٹیویٹی ان ہیسمنٹ پروجیکٹ 93.8 ملین ڈالرز کا ہے جسکی51 فیصد تکمیل ہوچکی ہے۔سندھ پبلک سیکٹر مینجمنٹ میں 47.4 ملین ڈالرز کی اصلاحات ہیں اور اب یہ منصوبہ مکمل ہوچکا ہے جسکی ابھی تک تکمیل کی رپورٹ تیار نہیں کی جاسیڈ ہے۔ 20 ملین ڈالرز کے سندھ ان ھیسنگ ریسپانس ٹو ریڈیوز اسٹنٹنگ منصوبہ کی 32 فیصد تکمیل ہوئی ہے۔ 71.2 ملین ڈالرز کا سندھ ریزیلنس پروجیکٹ (ایس آر پی) منصوبہ 71 فیصد مکمل ہوچکا ہےاور 259.1 ملین ڈالرز کا سندھ واٹر سیکٹر امپروومینٹ پروجیکٹ فیز 1 (ایس ڈبلیو ایس آئی پی)ہے جسکی 99 فیصد تکمیل ہوچکی ہے۔ 56.4 ملین ڈالرز کا سندھ بیراجز امپروومنٹ پروجیکٹ (ایس بی آئی پی) 18 فیصد مکمل ہوچکا ہے اور 4 ملین ڈالرز کا سندھ ملٹی سیکٹرل ایکشن نیوٹریشن (ایم ایس اے این) 80 فیصد تکمیل اور 1 ملین ڈالرز کا سندھ سولر انرجی پروجیکٹ (ایس ایس ای پی) منصوبہ ہے جوکہ ابتدائی مراحل میں ہے۔
کراچی:
اس وقت شہر میں ورلڈ بینک کے مالی تعاون سے چار منصوبے جاری ہیں جس میں 25.3 ملین ڈالرز کا کراچی نیبر ہڈ پروجیکٹ (ایم این آئی پی) ہے جوکہ 29 فیصد مکمل ہوچکا ہے ۔1.1 ملین ڈالرز کا کراچی واٹر اینڈ سیوریج سروسز کی بہتری کا منصوبہ جوکہ حال ہی میں شروع کیا گیا ہے اور اس پر تین فیصد کام ہوچکا ہے۔ 4ملین ڈالرز کا کراچی موبلٹی منصوبہ بھی ایک نیا منصوبہ ہے اور حال ہی میں اس کا آغاز کیا گیا ہے۔4.8 ملین ڈالرز کا کمپی ٹیٹو اینڈ لائیو ایبل سٹی آف کراچی پروجیکٹ (CLICK) ایک نیا منصوبہ ہے اور اس پر دو فیصد کام ہوچکا ہے۔ اجلاس میں تمام منصوبوں پر ہونے والی پیشرفت پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔
کورونا وائرس سے مزید 6 جاں بحق، 212 دیگر متاثر ہوئے، وزیراعلیٰ سندھ
وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے روزانہ کی بنیاد پر کورونا وائرس صورتحال سے متعلق رپورٹ شیئر کرتے ہوئے کہا ہے کہ 6مزید مریضوں کے جاں بحق ہونے کے بعد اموات کی تعداد بڑھ کر 2415 ہوگئی ہے اور 212 دیگر افراد متاثر ہوئے ہیں جس کے بعد تعداد بڑھ کر ایک لاکھ 29 ہزار 827 ہوگئی ہے۔ وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ کورونا وائرس کے 212 نئے کیس سامنے آئے جب 6351 ٹیسٹ کیے گئے جو موجودہ تشخیصی شرح کا تین فیصد ہیں۔ اب تک 1018013 نمونوں کی جانچ کی جا چکی ہے جس کے نتیجے میں پورے سندھ میں 129827 کیسز سامنے آئے جو تشخیص کی شرح کا 13 فیصد ہیں۔ وزیراعلیٰ سندھ نے بتایا کہ اس وقت 3807 مریض زیر علاج ہیں جن میں سے 3492 گھروں میں، 6 آئسولیشن مراکز میں اور 309 مختلف اسپتالوں میں ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ 155 مریضوں کی حالت تشویشناک بتائی گئی ہے جن میں 15 کو وینٹی لیٹرز پر منتقل کردیا گیا ہے۔ وزیراعلیٰ سندھ کے مطابق 221 مریض گزشتہ رات صحتیاب ہوگئے۔ اب تک صحتیاب ہونے والے مریضوں کی تعداد 123605 ہوگئی ہے۔ مراد علی شاہ نے بتایا کہ کراچی سے کورونا وائرس کے 212 نئے کیسز میں سے 147 مثبت کیسز کی تشخیص ہوئی جن میں ضلع جنوبی 67، ضلع شرقی 34، ضلع کورنگی 18، ضلع وسطی 16، ضلع ملیر 8 اور ضلع غربی 4 ہیں۔ جبکہ دیگر اضلاع میں ٹھٹھہ 9، بدین 6، سانگھڑ اور سجاول 3-3، ٹنڈو محمد خان ، گھوٹکی ، جیکب آباد ، مٹیاری اور گھوٹکی 2-2، جامشورو، خیرپور، لاڑکانہ، میرپورخاص، ٹنڈو الہیار اور عمرکوٹ میں 1-1 کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔
عبدالرشید چنا
میڈیا کنسلٹنٹ وزیراعلیٰ سندھ