بوس مین کا موت کے بعد ریکارڈ، اوباما کو بھی پیچھے چھوڑ دیا

اس وقت پوری دنیا میں موجود امریکی اداکار چیڈوک بوس مین کے مداح ان کی اچانک موت کی خبر سنتے ہی ان کے جانے کا غم منارہی ہے۔

چیڈوک بوس مین نے کئی فلموں میں اداکاری کے جوہر دکھائے اور وہ اپنے منفرد انداز کی وجہ سے اپنے مداحوں کے دلوں میں زندہ ہیں۔

تاہم دنیا سے چلے جانے کے بعد بھی انھوں نے انٹرنیٹ کی دنیا میں ایک ریکارڈ بنادیا۔

یہ بات ایک عام آدمی کے سمجھنے کے لیے تو بہت مشکل ہے لیکن اس کا خلاصہ خود مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ ٹوئٹر نے کر ڈالا۔

چیڈوک بوس مین کے ٹوئٹر ہینڈل سے ہی ان کی موت کا اعلان کیا گیا تھا، جس نے فلمی دنیا کو ایک صدمے میں مبتلا کردیا تھا، جو ان کے اہلخانہ کے توسط سے ممکنہ طور پر ٹوئٹر ہینڈل چلانے والے منیجر کی جانب سے کیا گیا
ان کی موت کے اس پیغام پر ان کے چاہنے والوں کی جانب سے تبصرہ کیا گیا جبکہ اس پیغام کو لائیک کرکے اپنے جذبات کا اظہار بھی کیا گیا۔

تاہم اب ٹوئٹر کی جانب سے یہ اعلان کیا گیا ہے کہ بوس مین کے اس ٹوئٹ نے نہ صرف دنیا میں تہلکہ مچادیا بلکہ یہ ٹوئٹ ویب سائٹ کی تاریخ میں سب سے زیادہ لائیکس والی ٹوئٹ بن گئی ہے۔

ٹوئٹر کی جانب سے بتایا گیا کہ اس ٹوئیٹ سے زیادہ آج تک کسی بھی ٹوئٹ کو اتنے لائیک نہیں ملے۔

مارول اسٹوڈیو کی فلم ’بلیک پینتھر‘میں مرکزی کردار ادا کرنے والے 43 سالہ اداکار چیڈوک بوس مین بڑی آنت (کولون ) کے کینسر میں مبتلا تھے
غیر ملکی ویب سائٹ کی رپورٹ کے مطابق ٹوئٹر پر جاری پیغام میں اہلخانہ کا کہنا تھا کہ چیڈوک بوس مین 2016 سے کینسر کا شکار تھے، ابتدا میں وہ اس بیماری کے تیسرے درجے پر تھے اور گزشتہ 4 برس تک اس سے لڑنے کے بعد یہ بیمار چوتھے درجے پر پہنچی گئی۔

اس پیغام میں یہ بھی کہا گیا کہ چیڈوک ایک فائٹر تھے جنہوں نے اپنی بیماری کے دن بہت صبر و برداشت کے ساتھ گزارے، ان کی سرجریز اور کیموتھراپی ہوئیں اور انھوں نے اسی دوران فلمیں بھی بنائیں جنہیں مداحوں نے خوب پسند کیا۔

ٹوئٹر پر اس پیغام میں اہلخانہ نے پیار اور محبت بھرے پیغامات اور دعائیں کرنے پر مداحوں کا شکریہ ادا کیا۔
مذکورہ ٹوئٹ کو 68 لاکھ لائیکس ملے جبکہ 30 لاکھ افراد نے اسے اپنی وال پر ریٹوئٹ کیا، تاہم خود ٹوئٹر کی جانب سے بھی اس کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا گیا کہ اس پیغام نے تاریخ رقم کردی۔

اس سے قبل س سے زیادہ لائیکس حاصل کرنے والی ٹوئٹ سابق امریکی صدر باراک اوباما کی تھی جسے 43 لاکھ سے زائد لائیکس ملے تھے۔

باراک اوباما نے اپنے ٹوئٹ میں جنوبی افریقہ کے انقلابی لیڈر نیلسن منڈیلا کا ایک جملہ تھا جس میں منڈیلا نے کہا تھا کہ ’کوئی بھی شخص اپنے رنگ، نسب اور مذہب کی وجہ سے کسی نفرت کرتا ہوا پیدا نہیں ہوتا۔