مصر : بندروں کے 2 ہزار سال پرانے ڈھانچے برآمد

وارسا یونیورسٹی کے آرکیالوجی ڈیپارٹمنٹ کی ایک تحقیقاتی ٹیم کھدائی کررہی تھی کہ ایک انسان نما ہڈیوں کا ڈھانچہ برآمد ہوا جس کی جانچ کے بعد معلوم ہوا کہ وہ دراصل ایک بندر کا ڈھانچہ ہے اور 2 ہزار سال پرانا ہے۔

تحقیقاتی ٹیم نے اس جگہ کی مزید کھدائی کی تو وہاں سے بیسیوں بندروں کے ڈھانچے برآمد ہوئے جس کی عمریں مختلف تھیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ بندر ایشیائی علاقوں میں پائے جاتے ہیں اور ان کو بھارت سے لایا گیا ہوگا کیونکہ 2 ہزار سال قبل مصر اور روم کے تاجر برصغیر سے جانوروں کی تجارت کرتے تھے۔

تحقیقاتی ٹیم کے مطابق اتنی بڑی تعداد میں بندروں کے ڈھانچے ملنے سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ کسی بحری جہاز کو حادثہ پیش آیا ہوگا اور یہ بندر یہاں دفن ہوگئے ہوں گے