گندے نالوں کی صفاٸی

میں 1984 میں اے ایم سی سینٹر ایبٹ آباد میں بیسک ملٹری ٹریننگ کے بعد چترال اسکاوٹس میں پوسٹ ہوگیا ۔ اگر ایمانداری سے مانوں تو میری اصل ملٹری ٹریننگ تو چترال اسکاوٹس میں ہوٸی اور اچھی یا بری ٹریننگ کا سہرہ بھی کرنل مراد خان نیر کے سر رہے گا۔ خاکی وردی کی عزت برقرار رکھنی جس طرح انہوں نے سکھاٸی تھی وہ شاید اب یا تو ہم بھولتے جا رہے ہیں یا ہماری قدریں اور ضرورتیں بدل گٸی ہیں ۔ تب تو جو بالترتیب آفیسرز ۔ جے سی اوز ۔ این سی او یا سپاہی کے کام ہوتے وہ بالترتیب انہی سے اسی طرح لٸے جاتے تھے ۔ حد تو یہ تھی کہ جو کام ہمارے نہیں ہوتے تھے کوٸی وردی والا کرتا تو کرنل مراد خان نیر اس کیلٸے فوراََ سزا دیکر مستقبل میں وہ سلسلہ بند کر دیتے تھے۔

کراچی کے گندے نالے صاف کرنے کی تکلیف دہ خبر پر بہت سے سینیر آفیسرز نے بھی سوشل میڈیا پر فخر سے لکھا کہ دیکھٸے سول انتظامیہ سے تو گندے نالے بھی صاف نہیں ہوتے ۔ اب یہ بھی ہم کرکے دکھاٸیں گے ۔ مجھے کرنل مراد بابا بہت یاد آٸے ۔

جنرل ضیاالحق نے شندور پولو میچ دیکھنے کی حامی بھری تو چترال اسکاوٹس نے استقبال اور انتظامات کی تیاریاں شروع کردیں ۔ شندور ہٹ نیا تعمیر ہوا تھا مگر پھر بھی انجنیر کور کے ایک بہت سینیر افسر روز ہیلی کاپٹر میں گلگت کی طرف سے آ برجمان ہوتے اور ہمیں ہدایات جاری کرتے رہتے حالانکہ ہم ان کے انڈر کمانڈ بھی نہ تھے ۔

آخری دن جب ہم جنرل ضیاالحق کا انتظار کر رہے تھے تو وہ بھی پہنچ چکے تھے اور انہوں نے ہمارے کیپٹن رینک کے سگنل آفیسر سے کہا کہ جاٶ ذرا باتھ روم بھی چیک کرآٶ کہیں کوٸی کمی نہ رہ جاٸے ۔ خلاف معمول نہ جانے کیوں کرنل مراد خان نیر کی برداشت اب ختم ہوچکی تھی کہ انہوں نے اس سینیر آفیسر سے تو کچھ نہ کہا مگر وہ اپنے ہی کیپٹن پر چیخ اٹھے کہ فوجی آفیسرز کو کب سے باتھ روموں کی صفاٸی دیکھنے کو کہا جانے لگا ہے ۔ تم جاٶ اپنی ٹیلیفون ایکسچینج سنبھالو اور کمیونیکشن کی ڈیوٹی نبھاٶ ۔ باتھ روم کی صفاٸی کا کام سویپر بخوبی دیکھ لیتے ہیں ۔ انکی اس بات کا فاٸدہ یہ ہوا کہ اس سینیر آفیسر نے دوبارہ چترال اسکاوٹس کے کاموں میں پورا دن کوٸی مداخلت نہ کی ۔

اخبارات ۔ ٹی وی اور سوشل میڈیا پر گندے نالوں کی صفاٸی کی فخریہ پیشکش اور ستاٸش بھرے پیغامات پر میں دنوں سے یہ امید لگاٸے بیٹھا ہوں کہ کہیں سے کرنل مراد خان نیر جیسے کسی مرد مجاہد کی غصے بھری آواز آٸیگی کہ گندے نالوں کی صفاٸی کی ڈیوٹی جس محکمہ کی ہے وہی کرے ۔ ہمارے لٸے ملکی دفاع اور دشمن کو ناکوں چنے چبوانے سے ذیادہ فخریہ بات کوٸی ہو ہی نہیں سکتی اور نہ ہونی چاہیے ۔

#BrigBashirArain