عمران خان کو 18وین ترمیم منظور کرنے پر شریک چیئرمین آصف زرداری کا شکر گزار ہونا چاہیئے

سندھ کے وزیر توانائی امتیاز احمد شیخ نے کہا ہے

عمران خان کو 18وین ترمیم منظور کرنے پر شریک چیئرمین آصف زرداری کا شکر گزار ہونا چاہیئے اگر آج 18 ویں ترمیم نا ہوتی تو صدر عارف علوی دو سالہ حکومتی کارکردگی پر وفاقی حکومت کو فارغ کردیتے ، نو وارد سیاستدان اسلام آباد میں بیٹھ کر کراچی کو لاوارث سمجھتے ہیں یہ بات انہوں نے اپنے دفتر میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی

انہوں نے کہا کہ نالے صاف نہیں ہوتے تو این ڈی ایم اے کو بھیجا جاتا ہے وزیر اعظم سے درخواست ہے کہ توانائی کے مسائل کے حل کیلئے بھی این ڈی ایم اے کو بلایا جائے.
وزیر توانائی سندھ امتیاز احمد شیخ نے کہا کہ سندھ کے عوام کو 18 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ کی صورت میں تحریک انصاف کی حکومت کو ووٹ نا دینے کی سزا دی جا رہی ہے, کراچی حیدرآباد لاڑکانہ سکھر شکارپور نوابشاہ اور سندھ کے دیگر شہروں میں شدید گرمی اور حبس کے موسم میں بھی اٹھارہ سے بیس گھنٹے کی لوڈشڈ نگ کی جارہی ہے، اوور بلنگ اورٹرانسفارمرز کی خرابیاں بھی درست نہیں کی جارہی انہوں نے کہا کہ کراچی میں 8 سے 12 گھنٹے کی لوڈشڈینگ معمول بن گئی ہے کراچی سمیت پورے صوبے کے عوام کو لوڈشیڈنگ کے عذاب میں مبتلا رکھ کر تنگ کیا جارہا ہے انہوں نے کہا کہ کے الیکٹرک حیسکو اور سیپکو اپنی ذمہ داریاں ادا نہیں کر پا رہے ہیں کرنٹ لگنے سے ہلاکتوں پر اگر متاثرہ خاندان خود کسی دباؤ میں آکر ایف آئی آر درج نہ کرا پائیں تو اس صورت میں سرکار کی مدعیت میں متعلقہ بجلی کمپنی کے سربراہ کے خلاف ایف آئی آر کے اندراج کے لئے حکومت متاثرہ خاندان کی بھرپور مدد کرے گی اور اس سلسلے میں محکمہ قانون سے مشاورت جاری ہے وزیر توانائی سندھ امتیاز احمد شیخ نے کہا کہ سندھ میں بجلی اور گیس کے مسئلے حل نہیں ہو رہے، سندھ گیس کی پیدوار میں خود کفیل ہے لیکن ہماری ضرورت کے مطابق گیس بھی نہیں دی جارہی، سندھ سب سے زیادہ گیس پیدا کرنے والا صوبہ ہے لیکن ہمیں 1000 ایم ایم سی ایف ڈی سے بھی کم گیس دی جاتی ہے اور ہماری بڑی مقدار میں گیس وفاق لے جاتا ہے انہوں نے کہا کہ وفاقی وزیر توانائی ہماری بات نہیں سنتے بلکہ وہ سندھ آتے بھی ہیں تو گورنر ہاؤس میں بٹھ کر چلے جاتے ہیں انہوں کہا کہ وفاقی وزیر توانائی اور چیئرمین نیپرا کو متعدد خطوط لکھ کر توانائی کے مسئلے حل کرنے کے لے سندھ اکر صورتحال کو دیکھنے کی دعوت دی انہوں نے بتایا کہ چیئرمین نیپرا آئندہ بدھ کو کراچی آکر اسی مسئلے پر ہم سے بات کریں گے لیکن نیپرا ریگولیٹر ہے اصل مسئلے کا حل وفاقی وزارت توانائی اور پاور ڈویژن کے پاس ہے انہیں دلچسپی لینی چاہئے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ کراچی سندھ کا اٹوٹ حصہ ہے اور صدیوں سے سندھ کا حصہ ہے بعض لوگ نعرے بازی اور بلیک میلنگ کے لئے کراچی کا نام استعمال کرتے ہیں انہوں نے کہا کہ پپلز پارٹی کراچی اور کراچی کے شہریوں کو اون کرتی ہے اور یہ ہمارا شہر ہے اس شہر کی بہتری کے لئے ہر اقدام اٹھائیں گے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ وزیراعظم کو شریک چیئرمین آصف علی زرداری کا شکر گزار ہونا چاہئے کہ اٹھارویں ترمیم موجود ہے ورنہ صدر عارف علوی موجودہ حکومت کی دو سالہ کار کردگی پر کب کا ففٹی ایٹ ٹو بی کا استعمال کر چکے ہوتے انہوں نے کہا کہ نیپرا سے کہوں گا کہ سندھ کے تمام شہروں میں کھلی کچہری منعقد کرے اور ہر شہر میں اپنا دفتر کھولے تا کہ مسائل کا براہ راست ادراک ہوسکے