مُجھے عِشق حُسنِ کِتاب سے،

یوم آزادی پر عہد

مُجھے عِشق حُسنِ کِتاب سے،
مرا ہاتھ دستِ قلَم پہ ہے۔۔۔۔
جو دوات ، صُورتِ ظرفِ خُوں ،
مرے جسم و جاں میں بکھر گئ ۔۔۔
کِسی ایک بُوند سے لفظ کی ،
کوئی سطر سطر سنور گئ ۔۔۔
یہی آرزوۓ دوام ہے ،
کہیں اِس طرح کی مُعلِمہ،
رہِ زندگی میں نصیب ہو ۔۔۔
جو کِتابِ ہست سمجھ سکے ،
جو علوُمِ جاں سے قریب ہو ۔۔۔۔۔

مرا عزم ، نیّت و حوصلہ، کہ جُڑے ہیں میرے شعُور سے ۔۔۔۔۔
یہ دُعا ہے ربِ جلیل سے ،
وہ رِداۓ شوق مِلے کہیں ۔۔۔
جِسے اوڑھ کر کبھی سر بسر ،
کِسی ابرِ جہل کو چیر کر ۔۔۔
میں اُجال دوں کوئی سر زمیں ۔۔۔۔۔
مُجھے عِشق حُسنِ کِتاب سے ،
مِرا ہاتھ دستِ قلَم پہ ہے ۔۔۔۔

چلو مُلک و قوم کے واسطے،
اِسے آگہی کا عَلَم کریں ۔۔۔۔۔
کہ جہان بھر کے تمام لوگ ہمیں مِل کے خیر ُالاُمم کہیں ۔۔۔۔۔۔
(ڈاکٹر فرح ناز راجہ )