بڑا بے وقـــــــوف

بڑا بے وقـــــــوف

ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯﺍﻋﻼﻥ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﺳﻠﻄﻨﺖ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ”ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ” ہو ، ﺍﺳﮯ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﻭ ۔
ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺑﮭﯽ۔۔۔ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮨﯽ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ، ﺧﯿﺮ ﺣﮑﻢ ﺗﮭﺎ، ﻋﻤﻞ ﮨﻮﺍ ۔ ۔ ۔
ﺍﻭﺭ ”ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ” ﮐﮯﻧﺎﻡ ﺳﮯﺳﯿﻨﮑﮍﻭﮞ ﻟﻮﮒ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﺩﺋﯿﮯ ﮔﺌﮯ ،

ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯ ﺳﺐ ﮐﺎ ﺍﻣﺘﺤﺎﻥ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ”ﻓﺎﺋﻨﻞ ﺭﺍﺅﻧﮉ ” ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ‘ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ “ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ” ﻗﺮﺍﺭ ﭘﺎﯾﺎ ۔
ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﻠﮯ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﮨﺎﺭ ﺍﺗﺎﺭ ﮐﺮ ﺍﺱ ”ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ” ﮐﮯ ﮔﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﺩﯾﺎ۔
ﻭﮦ ”ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ” ﺍﻋﺰﺍﺯ ﭘﺎ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ ﻟﻮﭦ ﮔﯿﺎ ،
ﺍﮎ ﻋﺮﺻﮯﺑﻌﺪ ﻭﮦ ”ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ” ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺳﮯﻣﻠﻨﮯ ﮐﮯﺧﯿﺎﻝ ﺳﮯ ﺁﯾﺎ،
ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻣﺮﺽ ﺍﻟﻤﻮﺕ ﻣﯿﮟ ﺁﺧﺮﯼ ﻭﻗﺖ ﮔﺰﺍﺭ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ،
ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ، ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯ ﺍﺫﻥِ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﺑﺨﺶ ﺩﯾﺎ۔

ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ ﺣﺎﺿﺮ ﮨﻮﺍ، ”ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺳﻼﻣﺖ۔۔۔ﺁﭖ ﻟﯿﭩﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﮨﯿﮟ،”۔۔۔؟؟؟

ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻣﺴﮑﺮﺍﯾﺎ، ﺍﻭﺭ ﺑﻮﻻ ”ﻣﯿﮟ ﺍﺏ ﺍﭨﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﺎ، ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﮯ ﺳﻔﺮ ﭘﺮ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ، ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮔﯽ، ﺍﻭﺭ ﻭﮨﺎﮞ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻟﯿﭩﻨﺎ بھی ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮬﮯ۔۔۔!!!”

ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ ﻧﮯ ﺣﯿﺮﺕ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ
”ﻭﺍپس ﻧﮩﯿﮟ ﺁﻧﺎ۔۔۔؟؟؟؟ ﮐﯿﺎ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﻭﮨﯿﮟ ﺭﮨﻨﺎ ﮬﮯ۔؟”
ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺑﮯ ﺑﺴﯽ ﺳﮯ ﺑﻮﻻ ”ﮨﺎﮞ۔۔۔ﮨﻤﯿﺸﮧ ﻭﮨﯿﮟ ﺭﮨﻨﺎ ہے۔!”

ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ”ﺗﻮ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺗﻮ ﻭﮨﺎﮞ ﯾﻘﯿﻨﺎََ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﺍ ﻣﺤﻞ، ﺑﮍﮮ ﺑﺎﻏﯿﭽﮯ، ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﻏﻼﻡ، ﺍﻭﺭ ﺑﮩﺖ ﺳﺎﻣﺎﻥِ ﻋﯿﺶ ﺭﻭﺍﻧﮧ ﮐﺮﺩﯾﺎ ہو ﮔﺎ۔!”

ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﭼﯿﺦ ﻣﺎﺭ ﮐﺮ ﺭﻭ ﭘﮍﺍ، “ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ” ﻧﮯ ﺣﯿﺮﺕ ﺳﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﺍﺳﮯ ﺳﻤﺠﮫ ﻧﮧ ﺁﺋﯽ ﮐﮧ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﯿﻮﮞ ﺭﻭ ﭘﮍﺍ ﮬﮯ ۔

ﺭﻭﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﻧﮑﻠﯽ، ”ﻧﮩﯿﮟ۔۔۔ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻭﮨﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﺟﮭﻮﻧﭙﮍﯼ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻨﺎﺋﯽ۔۔۔

“ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ” ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ” ﮐﯿﺎ۔۔۔ﺍﯾﺴﺎ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﮬﮯ۔۔۔ﺁﭖ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﻤﺠﮫ ﺩﺍﺭ ﮨﯿﮟ، ﺟﺐ ﺁﭘﮑﻮ ﭘﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﻭﮨﺎﮞ ﺭﮨﻨﺎ ﮬﮯ ﺿﺮﻭﺭ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﮬﻮ ﮔﺎ”۔

ﺁﮦ۔۔۔!!!! ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﮯ ﻟﮩﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﻼ ﮐﺎ ﺩﺭﺩ ﺗﮭﺎ، ”ﺍﻓﺴﻮﺱ۔۔۔ﺻﺪ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ۔

ﺑﮯ ﻭﻗﻮﻑ ﺍﭨﮭﺎ۔۔۔۔۔ﺍﭘﻨﮯ ﮔﻠﮯ ﺳﮯ ﻭﮦ ﮨﺎﺭ ﺍﺗﺎﺭﺍ۔۔۔ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﮯ ﮔﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ ﺑﻮﻻ:
”ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺣﻀﻮﺭ۔۔۔ﺍﺱ ﮨﺎﺭ ﮐﮯ ﺣﻖ ﺩﺍﺭ ﺁﭖ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﯿﮟ۔۔۔!!!”

سبـــــــق:-
انسان اس عارضی زندگی کے اونچے مقام پر پہنچنے کی ہر ممکن جدوجہد سے گریز نہیں کرتا جو ہر ایک کیلئے لوہے کے چنے چبانے کے مترادف ہے مگر دائمی زندگی کا اعلٰی مقام جو بڑی آسانی سے نہ سہی مگر کوشش سے ہر کوئی پا سکتا ہے۔

️تلـــــــخ حقیقـــــــت:
اپنی شاپنگ میں ہزاروں لگ جاتے ہیں جب خدا کے لئے دینا ہو تو ہم لوگ جیب میں سکے ڈھونڈتے ہیں
*_________