مقبوضہ کشمیر کا مسئلہ اقوام متحدہ کی قراردادوں اور مقبوضہ کشمیر کی عوام کی خواہشات کے مطابق حل کیا جائے۔ صوبائی وزراء اور وزیر اعلیٰ سندھ کے معاون خصوصی

کراچی۔ 5 اگست۔ مقبوضہ کشمیر کی آئینی حیثیت تبدیل کرنے کے ایک سال مکمل ہونے اور مقبوضہ کشمیر میں بے گناہ مسلمانوں پر بھارتی افواج کے ظلم و ستم پر  صوبائی وزراء مکیش کمار چاؤلہ ، جام اکرام اللہ دھاریجو اور وزیر اعلیٰ سندھ کے معاون خصوصی سید قاسم نوید قمر نے اپنے ردعمل دیتے ہوئے اقوام متحدہ اور دیگر عالمی قوتوں سے مطالبہ کیا ہے مقبوضہ کشمیر کا مسئلہ اقوام متحدہ کی قراردادوں اور مقبوضہ کشمیر کی عوام کی خواہشات کے مطابق حل کیا جائے اور خطے کو نریندر مودی کے توسیع پسندانہ عزائم سے محفوظ رکھا جائے۔ صوبائی وزیر برائے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات اور پارلیمانی امور مکیش کمار چاؤلہ نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ ہندوستان میں مسلمانوں سمیت تمام اقلیتوں پر ظلم بند کیا جائے۔ پاکستان میں اقلیتوں کو اپنی مذہبی رسومات پر عمل کرنے کی مکمل آزادی حاصل ہے۔ مکیش کمار چاؤلہ نے مزید کہا کہ افسوس کی بات ہے کہ مودی نے مقبوضہ کشمیر کی آئینی حیثیت تبدیل کر کے وہاں مسلمانوں پر ظلم وبربریت کا بازار گرم کررکھا ہے۔ وادی میں نافذ کرفیو فوری طور پر ختم کرکے وہاں کی عوام کو جینے کا حق دیا جائے۔ صوبائی وزیر برائے صنعت و تجارت اور انسداد بدعنوانی و محکمہ امداد باہمی جام اکرام اللہ دھاریجو نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ مقبوضہ کشمیر کا مسئلہ اقوام متحدہ کی قراردادوں اور مقبوضہ کشمیر کی عوام کی خواہشات کے مطابق حل کیا جائے جبکہ نریندر مودی کے توسیع پسندانہ عزائم کے باعث خطے کے امن کو شدید خطرہ لاحق ہے۔ اس خطرے کا سدباب کیا جائے تاکہ خطے کے عوام سکھ کا سانس لے سکیں۔ انہوں نے مذید کہا کہ پاکستان کی امن کی خواہش کو کمزوری نہ سمجھا جائے۔ وزیر اعلیٰ سندھ کے معاون خصوصی برائے محکمہ بحالی خصوصی افراد سندھ سید قاسم نوید قمر نے کہا کہ پاکستان اور بالخصوص سندھ کے عوام کے دل مقبوضہ کشمیر کے مسلمانوں کے ساتھ دھڑکتے ہیں۔ اقوام متحدہ ترجیحی بنیادوں پر مقبوضہ کشمیر کا مسئلہ حل کرے۔ سید قاسم نوید قمر نے مذید کہا کہ سندھ کے عوام مقبوضہ کشمیر کی آزادی کے لئے ہر قسم کے اخلاقی اور آئینی تعاون کے لئے تیار ہیں۔ اور امید کرتے ہیں کہ اس مسئلے کا پر امن حل نکالا جائے گا۔