شہر کے مختلف علاقوں میں انتہائی مضر صحت اشیاء بنانے والی غیر قانونی فیکٹریوں کا انکشاف ہونے پرادارہ تحفظ ماحولیات سندھ کی بڑی کارروائی

کراچی(اسٹاف رپورٹر)شہر کے مختلف علاقوں میں انتہائی مضر صحت اشیاء بنانے والی غیر قانونی فیکٹریوں کا انکشاف ہونے پرادارہ تحفظ ماحولیات سندھ کی بڑی کارروائی، ضلع ملیر کی حدود میں گندگی،مردہ جانوروں کی آلائشوں سےمختلف اشیا تیار کئے جانے کی شکایات پر سیپا کی ٹیم نے ڈپٹی ڈائریکٹر ضلع ملیر وارث علی گبول کی سربراہی میں ہفتے کے روز مختلف مقامات پر ضلعی انتظامیہ اور پولیس کی مدد سے چھاپے مارے۔ دو کارروائیوں کے دوران دیکھا گیا کہ مردہ جانوروں،جانوروں کی آلائشوں کو پکا کر مچھلی اور چکن کی فیڈ اور صابن تیار کیا جارہا تھا اطلاعات کے مطابق وہاں مردہ جانوروں اور انکی باقیات کو سینکڑوں کی تعداد میں رکھا گیا تھا تاہم چھاپہ مار ٹیم کے حکم پر تمام مردہ جانوروں اور انکی باقیات کو دفنا دیا گیا ہے مشیر ماحولیات بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایت پر محکمہ ماحولیات اور ڈی سی ضلع ملیر کی ٹیم نے کارروائی کرتے ہوئے ملیر کے مضافاتی علاقے میں کچرہ پلاسٹک جلا کر زہریلا مواد تیار کرنے والی ایک غیر قانونی چھوٹی فیکٹری کو موقع پر ہی بند کرادیا عینی شاہدین کے مطابق مذکورہ فیکٹری میں سینکڑوں مردہ جانوروں،انکی آلائشوں سے کھانے میں استعمال ہونے والی اشیاء تیار کی جاتی تھیں ضلع ملیر کے مختلف مضافاتی علاقوں ،سمندر کے قریب غیر قانونی فیکٹریوں کے خلاف بھی ایسا ہی آپریشن جاری رہےگا۔کارروائی کے دوران مضر صحت اشیاء تیار کرنے والے دو افراد بھی گرفتار کرلئے گئے بتایا جاتا ہے کہ تیار کردہ صابن،پلاسٹک کی اشیاءاور کھانے والی اشیاء مختلف مقامات پر فروخت کی جاتی تھیں ایک اور کارروائی میں لانڈھی بھینس کالونی میں پلاسٹک جلا کر فیول بنانے والی فیکٹری کو سربمہر کردیا گیا ڈپٹی ڈائریکٹر سیپا وارث علی گبول نے بتایا کہ پلاسٹک کو کھلی فضا میں جلایا جارہا تھا جو سنگین فضائی آلودگی کا سبب بن رہا تھا متعلقہ فیکٹری مالکان کے خلاف ماحولیاتی قوانین کے تحت قانونی کارروائی کی جائیگی.۔مشیر ماحولیات بیرسٹر مرتضی وہاب نے سیپا کی ٹیم کی کامیاب کارروائی کو سراہا اور کہا کہ ماحولیاتی آلودگی کا سبب بننے والی غیر قانونی بھٹیاں ختم کرنے کے لیے ان کے خلاف کارروائی جاری رکھی جائے ان کا کہنا تھا کہ گھناؤنے دھندے میں ملوث افراد انسانی جانوں سے کھیل رہے ہیں۔ سیپا کی ٹیم کی قیادت ڈپٹی ڈائریکٹر وارث گبول کررہے تھے جبکہ ضلعی انتظامیہ کی جانب سے اسسٹنٹ کمشنر ضلع ملیر اور ایس ایچ او سکھن تھانہ نے کارروائی میں حصہ لیا۔