مہنگائی کا سونامی لانے اور عوام کو سونامی میں دھکیلنے پر وزیراعظم نوبل انعام کے حقدار ہیں۔ بیرسٹر مرتضیٰ وہاب

کراچی ۔ مشیر اطلاعات قانون و اینٹی کرپشن سندھ بیرسٹر مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ ملک میں مہنگائی کا سونامی لانے اور عوام کو سونامی میں دھکیلنے پر وزیراعظم عمران خان نوبل انعام کے حقدار ہیں۔ عوام کی چینخیں نکالنے کا بیان دینے والوں نے ریکارڈ مہنگائی کرکے اپنے بیان کو حقیقت میں بدل دیا ہے۔ پی ٹی آئی حکومت کو سمندر سے تیل تو نہیں ملا مگر عوام کا تیل ضرور نکال دیا ہے۔ ناکام حکومت کی ناکام پالیسیوں نے ملکی عوام کی مشکلات میں اضافہ کردیا ہے حکومت نے روش نہ بدلی تو عوام کے غیض و غضب سے نہیں بچ سکیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز سندھ اسمبلی میڈیا کارنر پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا انہوں نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی کی وفاقی حکومت کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے ملکی عوام مشکلات میں پھنس چکی ہے وزیراعظم نے ایک خوشخبری کا زکر کیا کہ ساحلی پٹی پر تیل نکل آیا ہے تیل تو نہیں نکلا مگر افسوس کہ عوام کا تیل ضرور نکال دیا ہے عوام کی حقیقت میں چیخیں نکل چکی ہیں کیا یہی وہ نئے پاکستان کا وعدہ تھا۔ انہوں نے کہا کہ ادویات کی قیمتوں میں سو گنا تک اضافہ ظلم کے مترادف ہے۔ بیرسٹر مرتضی وہاب نے وزیراعظم کو ادویات کی قیمتیں چیک کرنے کا مطالبہ کیا، وفاقی حکومت نے چینی کی قیمتوں میں بھی تین روپے اضافہ کردیا آخر حکومت نے اپنے دور میں مہنگائی کے علاوہ دیا کیا ہے۔ ہمارے دور میں ایم کیوایم پاکستان ہماری اتحادی تھی پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھنے پر متحدہ اپوزیشن بینچوں پر بیٹھ گئے تھے، آج ایم کیوایم پاکستان کو تیل کی بڑھتی قیمتیں کیوں نظر نہیں آرہیں؟ یہ صرف اقتدار کی خاطر ایک ساتھ جمع ہیں۔ انہیں عوام سے کوئی سروکار نہیں ہے۔ بیرسٹر مرتضی وہاب نے بتایا کہ ٹیکسز کی مد تین سو انیس ارب روپے کا شارٹ فال ہے۔ وزیرخزانہ کے تمام دعوے ہوا ہوگئے ٹیکس نیٹ بڑھنے کے بجائے کم ہوگئے ہیں کیا یہی پاکستان کی سمت ہے جسکا یہ لوگ زکر کرتے تھے۔ برآمدات میں چھبیس فیصد کمی واقع ہوئی ہے۔ ملک میں مہنگائی پچھلے چھ سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے۔ مدینے کی ریاست کا خواب دکھانے والے خاموش کیوں ہیں۔ نو ماہ میں مسائل کی کمی کے بجائے اضافہ ہوگیا ہے۔ بجلی گیس، ادویات، ٹرانسپورٹ کرایوں میں اضافے سے عوام کی مشکلات بڑھی ہیں۔ آپ لوگوں نے ملکی عوام اور معیشت کا تیل نکال دیا ہے۔ آپ یوٹرن کی افادیت پر بڑی باتیں کرتے ہیں اگر یو ٹرن لینا ہے تو بے روزگاری اور مہنگائی کے خلاف لیں۔ عوام کو سڑکوں پر آنے پر مجبور نہ کریں۔ انہوں نے کہا کہ انکے وزراء ایک دوسرے کے آمنے سامنے ہیں انکی توجہ عوامی مسائل پر نہیں ہے بلکہ اپنے مفادات پر ہے۔ پیپلزپارٹی نے اپنے دور میں کبھی غلط بیانی نہیں کی۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم کو مہنگائی کا سونامی لانے اور عوام کو سونامی میں دھکیلنے پر نوبل انعام دیا جانا چاہئیے۔ شہید بے نظیر کا نام مٹانے والے ماضی میں بھی نہیں رہے اور آئندہ بھی نہیں رہینگے۔ بے نظیر بھٹو کی خدمات کے اعتراف میں انکے نام پر پروگرام کا نام رکھا گیا، نام تبدیل کرنے کے لئے قانون میں تبدیلی لانا ہوگی۔ ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ اپوزیشن لیڈر کو پیپلزپارٹی کی حکومت سے متعلق عدالت سے رجوع کرنے سے پہلے قومی اسمبلی میں اپنی حکومت کی پالیسیوں پر بھی نظر دوڑا لیں۔ انہوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی کی سندھ حکومت کو بدنام کرنے کے لئے اوچھے ہتھکنڈے استعمال کئے جاتے ہیں۔ فنڈز کے استعمال کا فیصلہ کسی اور نے نہیں بلکہ سندھ اسمبلی نے کرنا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں