ایم کیوایم پاکستان والے بتائیں کہ انہوں نے وفاق میں بیٹھے اپنے اتحادیوں سے کراچی کو مسلسل نظرانداز کرنے پر کتنی بار احتجاج کیا ہے: سید ناصر حسین شاہ

ایم کیوایم پاکستان والے بتائیں کہ انہوں نے وفاق میں بیٹھے اپنے اتحادیوں سے کراچی کو مسلسل نظرانداز کرنے پر کتنی بار احتجاج کیا ہے: سید ناصر حسین شاہ

کراچی: سندھ کے وزیر اطلاعات و بلدیات، ہاؤسنگ و ٹاؤن پلاننگ، مذہبی امور، جنگلات و جنگلی حیات سید ناصر حسین شاہ نے متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے ممبران پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ کچھ لوگوں نے سیاسی شوشے کے طور پر سندھ اسمبلی کے باہر احتجاج کیا جو کہ سمجھ سے بالاتر تھا. صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ اگر ان لوگوں کے دلوں میں کراچی کے لوگوں کا اتنا ہی درد ہے تو یہ بتائیں کہ وفاقی حکومت جس کے یہ اتحادی بھی ہیں ان سے انہوں نے کراچی کے لیے کیا مانگا۔ انہوں نے یہ بات اتوار کے روز ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی. پریس کانفرنس کے دوران سندھ کے وزیر برائے تعلیم و لیبر سعید غنی اور صوبائی وزیر برائے توانائی امتیاز احمد شیخ بھی موجود تھے۔ سید ناصر حسین شاھ نے کہا کہ اگر ایم کیو ایم پاکستان کو احتجاج کرنا ہی ہے تو وہ وفاقی حکومت کے خلاف کریں نہ کہ صوبائی حکومت کے خلاف. سینئر صوبائی وزیر نے کہا کہ ایم کیو ایم والے وفاقی حکومت سے پوچھیں گے کہ کراچی کے لیے اعلان کردہ 162 ارب روپے کا پیکج کدھر ہے. انہوں نے کہا کہ ایسی پارٹی کے بارے میں کوئی کیا کہے جو اپنے ایک وفاقی وزیر کو ہی اون نہیں کرتی۔ صوبائی وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ ایم کیو ایم پاکستان کی سیاست کراچی اور حیدرآباد تک محدود ہے. انہوں نے کہا کہ میڈیا کے نمائندگان کو ایم کیو ایم پاکستان کے لوگوں سے پوچھنا چاہیے کہ انہوں نے وفاقی حکومت سے کراچی کے لیے کیا مطالبہ کیا. ناصر حسین شاہ نے کہا کہ ایم کیو ایم پاکستان کا دھرنا نیشنل اسمبلی کے سامنے بنتا ہے نہ کہ سندھ کی صوبائی اسمبلی کے سامنے. وفاقی حکومت پر تنقید کرتے ہوئے سید ناصر حسین نے کہا کہ پیٹرولیم کی مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ بے تحاشا اضافہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کی نااہلی کا ایک اور منہ بولتا ثبوت ہے۔ صوبائی وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ وفاقی حکومت کے اس فیصلے نے لوگوں کی پریشانیوں میں اضافہ کر دیا ہے۔ سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ کچھ روز میں پتہ چل جائے گا کہ پیٹرولیم کی مصنوعات میں اتنا بے تحاشہ اضافہ کر کے کسے فائدہ پہنچایا گیا ہے۔ صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ جب پیٹرول سستا تھا تو عوام کو دستیاب ہی نہیں تھا. انہوں نے کہا کہ سستے پیٹرول کے حصول کے لیے جس طرح لوگ دربدر پھرتے رہے ہیں اس کی ماضی میں مثال نہیں ملتی. سینئر صوبائی وزیر کا کہنا تھا کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت عوام کو تبدیلی کا دھوکا دے کر ہر میدان میں ناکام ہو چکی ہے۔ سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ نا تو وفاقی حکومت نے خود تیل درآمد کیا اور نہ ہی آئل مارکیٹنگ کمپنیوں کو تیل درآمد کرنے دیا، اور جب ان سے ان کی کارکردگی پوچھو تو یہ الزامات لگانے شروع کر دیتے ہیں۔ صوبائی وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کی نہ سمجھ میں آنے والی پالیسیوں کی وجہ سے لوگوں کی تکلیفوں میں اضافہ ہو رہا ہے. انہوں نے کہا کہ عمران خان وزیر اعظم بننے سے پہلے کہا کرتے تھے کہ پیٹرولیم کی مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے سے ہر چیز مہنگی ہو جاتی ہے اور آج وہ خود اس مہنگائی کی وجہ بنے ہوئے ہیں۔
سندھ حکومت کے حالیہ پیش کردہ بجٹ کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ اگرچہ یہ ایک آئیڈیل بجٹ نہیں تھا لیکن پھر بھی چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کی ہدایت پر وزیر اعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے جس قدر بہتر بجٹ ہوسکتا تھا وہ پیش کیا۔ صوبائی وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ اس بات میں کوئی شک نہیں ہے کہ سندھ کے حالیہ بجٹ میں صحت کے شعبے کو دیگر تمام شعبوں پر فوقیت دی گئی ہے لیکن اس کے علاوہ ہاری، کسان، چھوٹے زمیندار اور چھوٹے کاروبار کرنے والے لوگوں کے مسائل کو مدنظر رکھتے ہوئے بھی اس بجٹ میں کافی رقم رکھی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ تنقید برائے تنقید کرنے والوں کے علم میں شاید یہ بات نہ ہو لیکن سندھ کی صوبائی حکومت نے بجٹ میں ایک بڑا حصہ کراچی کے لیے بھی مختص کیا ہے. سینئر صوبائی وزیر کا کہنا تھا کہ پانی کے حوالے سے صوبائی حکومت مختلف منصوبوں پر کام کر رہی ہے اور یہ صوبائی حکومت کا وعدہ ہے کہ اس سلسلے میں جلد ہی بہتری لائی جائے گی۔ سپریم کورٹ کے لگژری گاڑیوں کے خرید نے کے حوالے سے حالیہ فیصلے کے بارے میں گفتگو کرتے ہوئے سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ سندھ حکومت نے پہلے ہی یہ فیصلہ کیا تھا کہ کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال کے باعث اس سال کوئی نئی گاڑی نہیں خریدی جائے گی۔ صوبائی وزیر اطلاعات نے واضح کیا کہ اگر بہت زیادہ ضرورت ہوئی تو فیلڈ میں کام کرنے والے سکیورٹی اہلکاروں کے لیے گاڑیاں خریدی جائیں گی یا پھر ٹڈی دل کے خا تمےکی لئےضرورت کے مطابق گاڑیاں خریدی جائیں گی۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے ہر فیصلے پر من و عن عمل کیا جائے گا اور سندھ حکومت کا ویسے بھی اس بجٹ میں لگژری گاڑیاں خریدنے کا کوئی منصوبہ نہیں تھا.
اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے سندھ کے وزیر برائے تعلیم و لیبر سعید غنی نے کہا کہ اس بجٹ میں سندھ حکومت کے سوا کسی بھی حکومت نے چاہے وہ وفاقی حکومت ہو یا صوبائی حکومت مزدوروں اور سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ نہیں کیا۔ صوبائی وزیر تعلیم کا کہنا تھا کہ وفاقی حکومت کی جانب سے 27 سے 66 فیصد تک پٹرولیم کی مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ عوام کے ساتھ سراسر زیادتی ہے. صوبائی وزیر تعلیم نے کہا کہ جب پاکستان تحریک انصاف کی ایک نااہل سلیکٹڈ حکومت کی جانب سے پیٹرولیم کی مصنوعات کی قیمتوں میں بے تحاشا اضافہ کیا گیا تو متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کی جانب سے کوئی بیان نہیں دیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے لوگ اپنے لوگوں کو منہ دکھانے کے لائق نہیں ہیں۔ سعید غنی نے کہا کہ ایم کیو ایم پاکستان کے دھرنے کا مقصد میڈیا میں پذیرائی حاصل کرنا تھا۔ صوبائی وزیر تعلیم و لیبر نے مزید کہا کہ کراچی کے انفراسٹرکچر کی بہتری اور پانی اور سیوریج کے نظام کو بہتر بنانے کے لئے اربوں روپے کے پروجیکٹس سائن ہوچکے ہیں۔