لاک ڈاؤن کے دوران شدید ڈپریشن کا سامنا کرنا پڑا، زارا نور عباس

پاکستان شوبز انڈسٹری کی معروف اداکارہ زارا نور عباس نے ذہنی صحت کے بارے میں بات کرتے ہوئے انکشاف کیا ہے کہ اُنہیں لاک ڈاؤن کے دوران کلینیکل ڈپریشن کا سامنا کرنا پڑا تھا اور ڈاکٹروں نے اُنہیں اس کا علاج کروانے کی ہدایت بھی کی تھی۔

حال ہی میں زارا نور عباس نے فوٹو اور ویڈیو شیئرنگ ایپ انسٹاگرام کی اسٹوری میں اپنی ذہنی صحت کے حوالے سے آگاہ کرتے ہوئے لکھا کہ ’لاک ڈاؤن کے دوران مجھے شدید ڈپریشن اور ذہنی تناؤ کا سامنا کرنا پڑا تھا لیکن میں نے اس پر توجہ نہیں دی تھی۔
زارا نور عباس نے لکھا کہ ’مجھے لگا تھا کہ شاید کام کے دباؤ کی وجہ سے میں تھکاوٹ محسوس کر رہی ہوں۔‘

اداکارہ نے لکھا کہ ’جب میری پریشانی مزید بڑھتی گئی تو میں نے اس پر توجہ دی جس کے بعد مجھے معلوم ہوا کہ مجھ میں کلینیکل ڈپریشن کی تشخیص ہوئی ہے۔‘

اُنہوں نے لکھا کہ ’ڈاکٹروں نے مجھے اس کے لیے ادویات اور کچھ تھیراپی کرنے کی ہدایت دی جو میں نے اُن کی ہدایت کے مطابق کیں۔‘

زارا نور عباس نے انسٹاگرام کی اپنی اگلی اسٹور ی میں ساتھی فنکاروں اور اپنے مداحوں پر زور دیتے ہوئے لکھا کہ ’ہمارے لیے یہ بے حد ضروری ہے کہ ہم ذہنی صحت کے بارے میں بات کریں۔
اداکارہ نے لکھا کہ ’آپ سب یہ بات یاد رکھیں کہ ذہنی مسئلے کو قبول کرنا شفایابی کی طرف ہمارا پہلا قدم ہوتا ہے۔‘

واضح رہے کہ ڈپریشن کی وجہ سے خودکشی کرنے والے بھارتی اداکار سوشانت سنگھ کی موت کے بعد سے بھارتی فنکار سمیت پاکستانی شوبز ستارے بھی سوشل میڈیا پر ذہنی صحت اور ڈپریشن کے حوالے سے اپنے تجربات مداحوں سے شیئر کرتے نظر آرہے ہیں۔