چین کا خطے میں امن کیلئے بھارت کے خلاف اقدام درست تھا

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے بھارت کی طرف سے فالس فلیگ آپریشن سے متعلق گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ بھارت فالس فلیگ آپریشن کی تیاری میں مصروف ہے اور بھارت نے پاکستانی سفارتی عملے پر جاسوسی کے الزامات لگائے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بھارت نے 50 فیصد سفارتی عملے کو کم کرنے کا کہا ہے تاہم نئی دہلی کے عمل پر اسلام آباد اپنا ردعمل ظاہر کرے گا۔ اس وقت بھارت کو خود اندرونی چیلنجز کا سامنا ہے۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ چین کا خطے میں امن کے لیے بھارت کے خلاف اقدام درست تھا۔ بھارت نے متنازع علاقے میں تعمیرات کیں جوغیر قانونی عمل ہے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب اور ترکی نے مقبوضہ کشمیر پر بھارتی مؤقف مسترد کر دیا ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں ہر روز شہادتیں ہو رہی ہیں۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ وزیر اعظم کی ہدایت پرفواد چودھری کے معاملے پر بات نہیں کروں گا۔

واضح رہے کہ پاکستان نے بھارتی ناظم الامور کو طلب کر کے انہیں بھارتی ہائی کمیشن کےعملے میں 50 فیصد کمی کرنے کا حکم دیا ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی نے گزشتہ روز کہا کہ پاکستان بھارتی وزارت خارجہ کے الزامات مسترد کرتا ہے۔ بھارت نے نئی دہلی میں پاکستانی ہائی کمیشن کے عملے کی تعداد نصف کرنے کا بہانہ بنایا ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ ہائی کمیشن کے عملے پر ویانا کنونشن کی خلاف ورزی کے الزامات کو مسترد کرتے ہیں، پاکستان کا سفارتی عملہ سفارتی آداب کے اندر رہ کر کام کرتا ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ کا مزید کہنا تھا کہ اسلام آباد میں بھارتی ہائی کمیشن کے عملے سے ناروا سلوک کے بیان کو مسترد کرتے ہیں

Courtesy hum news