میٹرک اور انٹرمیڈیٹ کے امیدواروں کو بغیر امتحان پروموٹ کرنےکی سمری پر اعتراض لگا دیا گیا

میٹرک اور انٹرمیڈیٹ کے امیدواروں کو بغیر امتحان پروموٹ کرنےکی سمری پر اعتراض لگا دیا گیا :-

تعلیمی بورڈ کے ایکٹ میں امیدواروں کو بغیر امتحان پاس کرنے کی کوئی شق موجود نہیں ہے..

بچوں کو پاس کرنا ہے تو پہلے بورڈ ایکٹ میں ترمیم کرنا ہوگی..

تفصیلات کے مطابق میٹرک اور انٹرمیڈیٹ میں بغیر امتحانات طلباء کو پرموٹ کرنےکا معاملہ کھٹائی میں پڑنےکا خدشہ پیدا ہوگیا ہے..،

محکمہ تعلیم کی جانب سے امیدواروں کو پروموٹ کرنےکی سمری پر وزارت قانون نے اعتراض اٹھا دیا،
ذرائع کے مطابق تعلیمی بورڈ کے ایکٹ میں امیدواروں کو بغیر امتحان پاس کرنے کی کوئی پالیسی موجود نہیں ہے..

تعلیمی بورڈز نے بچوں کی پروموشن کے لیئے وفاقی حکومت کی جانب سے جاری کردہ ہدایات کے مطابق سفارشات تیار کر رکھی تھیں..

وزرات قانون کے مطابق اگر امیدواروں کو بغیر امتحان اگلی جماعت میں پروموٹ کرنا ہے تو پھر بورڈ ایکٹ میں ترمیم کرنا ہوگی..

تاہم طلباء کی پرموشن کے لیئے حکومت کی جانب سے آرڈیننس کے ذریعے بورڈ قوانین میں ترمیم کی جائے، یاد رہے کہ صوبہ بھر کے 9 تعلیمی بورڈز میں 25 لاکھ امیدواروں کو اگلی جماعتوں میں پروموٹ کیا جانا ہے..

دوسری جانب بورڈ حکام کا کہنا ہے کہ حکومت کی جانب سےجو ہدایات ہوں گی اس کے مطابق امیدواروں کو پروموٹ کرنےکی پالیسی پر عمل درآمد کیا جائےگا..

واضح رہے کہ کرونا وائرس نے تعلیمی سرگرمیوں کو بھی بریک لگادی ہے..

سرکاری سکولوں کے سالانہ امتحانات ختم کر دیئے گئے ہیں، اول تا ہفتم کے طلبا کو بغیر امتحان اگلی جماعت میں ترقی دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے، سکول کھلتے ہی بچے نئی کلاس میں بیٹھیں گے کیمبرج سکول سسٹم نے بھی بغیر امتحانات کے طلباء کو اگلی کلاسوں میں ترقی دینے کی پالیسی کا اعلان کیا ہے..

طلباء کی گریڈنگ کلاس ورک، اسائنمنٹس اور امتحانات کو مدنظر رکھ کر کی جائے گی..

ترجمان تعلیمی بورڈز حکومت سندھ..

محمد منیر احمد اعوان