وزارتِ خزانہ ملک کےتعلیمی مستقبل پرکلہاڑی ماررہی ہے،چئیرمین ایچ ای سی

طارق بنوری نے سماء کو خصوصی انٹرویو دیا۔ انھوں نے بتایا کہ وزارت خزانہ ملک کے مستقبل پر کلہاڑی مار رہی ہے،تعلیم کے شعبے کیلئے فنڈز میں کمی بڑا المیہ ہے۔

چیئرمین ایچ ای سی نے بتایا کہ ادارے نے ہائیرایجوکیشن کمیشن کیلئے 104 ارب روپے کا بجٹ مانگا تھا،وزارت خزانہ نے70 ارب روپے کا وعدہ کیا لیکن بجٹ میں صرف64 ارب روپےرکھےگئے۔

طارق بنوری نے مزید بتایا کہ وزیراعظم کو خط لکھا ہے کہ تعلیمی بجٹ میں کٹوتی کا فیصلہ واپس لیا جائے۔ انھوں نے یہ بھی بتایا کہ جامعات کو 3 طرح کے فنڈز دیئے جاتے ہیں،گولڈ،سلوراوربراؤن کیٹگری کے بجٹ الگ الگ کاموں پرخرچ ہوتے ہیں،ایک طالب علم کی اعلیٰ تعلیم پر سالانہ تقریبا 2لاکھ روپےخرچ ہوتے ہیں۔

چیئرمین ایچ ای سی نے واضح کردیا کہ ریسرچ کیلئے پہلے7 ارب روپے دیتےتھے،بجٹ میں کمی کےباعث اب اس میں کٹوتی کرنا پڑے گی

Courtesy Samaa Urdu