سرفراز کی ٹیم میں واپسی دو دھاری تلوار ثابت ہوسکتی ہے

لاہور: قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان انضمام الحق نے کہا ہے کہ سرفراز احمد کی ٹیم میں واپسی دو دھاری تلوار ثابت ہوسکتی ہے۔

تفصیلات کے مطابق قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان انضمام الحق نے اپنے یو ٹیوب چینل پر گفتگو کرتے ہوئے پاکستانی ٹیم انتظامیہ کو متنبہ کرتے ہوئے بتایا کہ سابق کپتان سرفراز احمد کی ٹیم میں واپسی سے ڈریسنگ روم کے ماحول پر کیا اثرات مرتب ہوسکتے ہیں۔

انضمام الحق کا کہنا ہے کہ ٹیم انتظامیہ کو ڈریسنگ روم کے ماحول کے بارے میں محتاط رہنا ہوگا، اگر وہ سرفراز احمد کو اعتماد دیتے ہیں تو یہ ٹیم کے لیے فائدہ مند ثابت ہوسکتا ہے، چونکہ بابر اعظم نیا کپتان ہے اور اظہر علی بھی سرفراز جتنے تجربہ کار نہیں ہیں، اگر آپ سرفراز کو اعتماد نہیں دیتے ہیں تو یہ آپ کے ڈریسنگ روم کا ماحول کافی کشیدہ بناسکتا ہے۔
سابق کپتان نے کہا کہ چونکہ بابر اعظم سرفراز کی کپتانی میں کھیلا ہے لہٰذا اس پر بھی دباؤ پڑسکتا ہے، اسی طرح وہ کھلاڑی جو سرفراز کے ماتحت کھیلیں ہیں وہ بھی دباؤ میں آسکتے ہیں
انضمام الحق کا کہنا تھا کہ پی سی بی کو یا تو سرفراز احمد کو اے کیٹیگری میں شامل کرنا چاہئے تھا یا انہیں سینٹرل کنٹریکٹ میں شامل ہی نہیں کرتے۔

انہوں نے کہا کہ مجھے سرفراز سے بھی چھوٹی سی شکایت ہے کہ آپ کو اپنی اہلیت کے بارے میں خود ہی سوچنا چاہئے، انضمام الحق نے کہا کہ سرفراز کو سینٹرل کنٹریکٹ سے انکار کردینا چاہئے تھا انہیں پہلے پرفارم کرنا چاہئے تھا اور پھر بورڈ سے ایسا معاہدہ کرنے کا مطالبہ کرنا تھا جو ان کی اہلیت کے مطابق ہو۔

یاد رہے کہ چند روز قبل پاکستان نے دورہ انگلینڈ کے لیے 29 رکنی اسکواڈ کا اعلان کیا تھا جس میں فواد عالم اور سرفراز احمد کے ساتھ ساتھ نوجوان حیدر علی کو بھی شامل کیا گیا ہے