کورونا ٹیسٹ روک دیے جائیں تو کیسز کی تعداد کم ہوجائے گی : صدرٹرمپ

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کورونا کے حوالے سے ریمارکس دیئے ہیں کہ کورونا وائرس کیسز میں اضافے کی وجہ ٹیسٹنگ میں اضافہ ہے۔ انہوں نے دعوی کیا ہے کہ اگر ملک میں ٹیسٹنگ بند کردی جائے تو ملک میں بہت کم کیسز سامنے آ ئیں گے۔
ٹرمپ نے وائٹ ہاؤس میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اگر ہم ابھی ٹیسٹنگ چھوڑ دیں تو ہمارے پاس بہت کم کیسز ہوں گے ، اگر کوئی ہوتو۔انہوں نے ٹیسٹنگ کو ایک ‘دو دھاری تلوار’ قرار دیا جس سے ملک کا امیج برا نظر آتا ہے لیکن اس کا فائدہ یہ ہے کہ کیسز کے بارے میں معلوم ہوجاتا ہے ۔ ٹویٹر پر صدر ٹرمپ کا کہنا تھا کہ ہماری ٹیسٹنگ کسی بھی دوسرے ملک سے کہیں زیادہ بڑی اور اعلی درجے کی ہے (ہم نے اس پر بہت اچھا کام کیا ہے!) کہ اس سے زیادہ کیسز سامنے آئے ہیں۔ ٹیسٹنگ یا ٹیسٹنگ کے بغیر ہم کیسز بتارہے ہیں ۔
ٹرمپ نے ایک بار پھر کلوروکوین کو فائدہ مند بھی قرار دے دیا ۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ دیگر ممالک کورونا مریضوں کو کلوروکوئن دوا دے کرفائدہ اٹھا رہے ہیں لیکن امریکی ادارے اس میں ناکام رہے ہیں۔
امریکی ریاستیں الباما ، الاسکا ، ایریزونا ، آرکنساس ، کیلیفورنیا ، فلوریڈا ، نارتھ کیرولینا ، اوکلاہوما اور جنوبی کیرولینا سمیت ملک بھر کی متعدد ریاستوں میں کوروناکے مریضوں میں اضافہ دیکھا گیا ہے کیونکہ وہاں پابندیوں میں نرمی کی گئی ہے۔ ابتدا میں نیویارک ، واشنگٹن اور کیلیفورنیا کورونا کا مرکزی مقام تھے لیکن اب ان ریاستوں میں نئے کیسز میں بتدریج کمی واقع ہوئی ہے۔ جان ہاپکنز یونیورسٹی کے جمع کردہ اعداد و شمار کے مطابق امریکہ میں کورونا وائرس کے کل کیسز کی تعداد 2.1 ملین ہے۔ واضح رہے کہ دنیا بھر میں کورونا سے ہلاکتوں کی تعداد 4لاکھ 39ہزار تک جاپہنچی ہے

Courtesy gnn news urdu