ارطغرل پاپڑ

💕ارطغرل پاپڑ 💕
آجکل صرف پاکستان میں ہی نہیں پوری دنیا میں ارطغرل کے چرچے ہیں, میں بات صرف اپنے ملک کی کروں تو شاید ہی کوئی ایسا بندہ یا بندی ہو جس نے یہ سیریل نہ دیکھا ہو, اگر میں اپنی بات کروں تو میں نے ابھی دیکھنا شروع کیا ہے, صرف چار اقساط ہی دیکھی ہیں

اور یہ سوچنے اور لکھنے پہ مجبور ہو گئی ہوں کہ اتنے لوگوں نے دیکھا تو ہمارے ارد گرد کیا تبدلی آئی, اسی, نوے اقساط دیکھنے والے کی کیا حالت ہو گی,,,,, تو جو بات میں نے محسوس کی وہ یہ ہے کہ ہمارے ہاں ہر لڑکے یا لڑکی نے ارطغرل کی ڈی پی لگائی ہوئی ہے, ارطغرل پہ فنی ویڈیوز اور ٹک ٹاک,اس سیریل کو کروڑوں لوگوں نے دیکھا لیکن بہت کم ایسے ہوں گے جنھوں نے

اسے محسوس کیا, اس سیریل میں موجود ایک ایک کردار اور ایک ایک چیز ہمیں بہت کجھ سکھاتی ہے, اگر ہم اس قابل ہوں تو,,,,,
ہمارے ملک میں ارطغرل قلفی, ارطغرل پاپڑ, حلیمہ بیوٹی پارلر, حلیمہ برانڈ,,, اس کے آئی بروز کیسے ہیں, اسکا زیور کپڑے کیسے ہیں وغیرہ وغیرہ اس سے آگے ہم جا ہی نہیں سکتے, یہ نہیں سوچا ہو گا کہ سلیمان شاہ کیسا باپ ہے, وہ چرواہا اپنے قبیلے کا سردار کیسے بنا, اسکی ماں نے اس میں سرداروں والی خصوصیات پیدا کیں, اور اسکی سرداری کو اسکی بیوی نے قائم رکھا,اسکی بیوی سلطنت کے امور میں اسکی مدد کرتی ہے, عورتیں تجارتی برآمدات میں مردوں سے زیادہ کام کرتی ہیں, ہم اپنے شوہروں

کو کیا دیتی ہیں بازار کی چیزوں کی لمبی لسٹ اور ان سے انکے رشتہ داروں کی برائیاں,,, حلیمہ خاتون بلاشبہ ایک اچھی بیوی اور ایک اچھی ماں ہے, جسکا شوہر ایک قبیلے کا سردار اور بیٹے نے آدھی دنیا پہ حکومت کی, ارطغرل بظاہر ایک بہادر, نڈر جنگجو لیکن اندر سے خوف خدا رکھنے والا انتہائی نرم دل انسان, ڈٹ جانے والا, مظلوموں کا ساتھ دینے والا, اور حلیمہ شہزادی ہونے کے باوجود انتہائی عاجز, لیکن اپنی حفاظت خود کرنے والی ایک بہادر لڑکی, نہ غرور نہ تکبر, مجھے خود پہ افسوس ہوتا ہے کہ ہم کہاں جا رہے ہیں ہمارے بچوں کا فوکس صرف اور صرف موبائل اور سٹائل,,,,,,,, میرا کہنے کا یہ مطلب ہرگز نہیں کہ ہم حلیمہ اور ارطغرل بن جائیں, گزارش صرف اتنی ہے کہ ان میں موجود خصوصیات میں سے اگر کچھ کو ہم اپنی ذات کا حصہ بنا لیں تو ہمارے بیٹے ہماری بیٹیاں اپنے اپنے گھر کے ارطغرل اور حلیمہ تو بن سکتے ہیں,,,,
—-

تحریر: عائشہ عطاء
( ڈنگہ۔ گجرات )