ایک بار پھر صوبے میں سخت لاک ڈائون پر غور شروع

کراچی(اسٹاف رپورٹر)سندھ حکومت نے ایک بار پھر صوبے میں سخت لاک ڈائون پر غور شروع کردیا۔ذرائع کے مطابق کورونا کیسز اور اموات کی شرح میں مسلسل اضافے اور عالمی ادارہ صحت کی رپورٹ روشنی میں سندھ حکومت دو ہفتوں کے لاک ڈاون اور دیگر پابندیوں پرغور کررہی ہے زرائع کے مطابق وِزیراعلی سندھ مرادعلی شاہ کی اس معاملے پر عالمی ادارہ صحت کی تجاویز وسفارشات پر پارٹی قیادت سے مشاورت بھی ہوئی ہے۔ سندھ حکومت کے ذرائع کا کہنا ہے کہ لاک ڈاؤن کے معاملے پر وفاقی حکومت کو بھی اعتماد میں لیا جائے گا اور چاروں صوبائی حکومتوں سے بھی رابطے کیے جائیں گے۔ سندھ حکومت کا موقف ہے کہ کورونا وائرس کی حالیہ صورتحال کا تقاضہ ہے کہ عالمی ادارہ صحت کی سفارشات پر عمل کیا جائے۔ کابینہ زرائع کے مطابق سندھ کابینہ اراکین کی تجویز کے مطابق سخت لاک ڈاون کرکے مقررہ دنوں میں بڑے پیمانے پر ٹیسٹنگ کی جاسکتی ہے، اس سے وائرس کا پھیلاؤ نہیں روک سکتے تاہم کورونا مریضوں کو ٹریس کرکے آئسولیٹ ضرور کرسکتے ہیں۔ اس ضمن میں وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ نے کابینہ کے سینئر ارکان سے بھی مشاورت کی ہے علاوہ ازیں پیپلزپارٹی کے چیرمین بلاول بھٹو زرداری نے بھی گزشتہ روز اپنے ایک ٹوئیٹر پیغام میں ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی سفارشات پر عمل درآمد کا عندیہ دیا تھا۔