ہم نسلی تعصب کے خلاف ایک مثال ہیں، شنیرا اکرم

پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان وسیم اکرم کی اہلیہ شنیرا اکرم نے دنیا کو بتا دیا کہ اُن کی اور وسیم اکرم کی شادی نسلی تعصب کے خلاف ایک مضبوط مثال ہےاور اُن کے لیے رنگت اہمیت نہیں رکھتی بلکہ پیار زیادہ اہم ہے۔

تصویر اور ویڈیو شیئرنگ ایپ انسٹاگرام پر شنیرا اکرم نے اپنے اور وسیم اکرم کے ہاتھ کی ایک تصویر شیئر کی جس کے ساتھ ہی انہوں نے لکھا کہ ہماری شادی کے بعد لوگ ہمیں کہتے تھے کہ وسیم نے اس سے اس لیے شادی کی کیونکہ یہ گوری ہے۔ مجھ سے سوال کرتے تھے کہ کیا اس کے جسم سے الگ بو آتی ہے؟ اس نے کسی دیسی لڑکی سے شادی کیوں نہیں کی؟
شنیرا نے لکھا کہ لوگ کہتے ہیں دو الگ الگ رنگ کے لوگوں کا ملنا قدرتی نہیں ہے، یہ رشتہ زیادہ نہیں چل سکتا۔ تم دونوں ایک دوسرے سے بہت الگ ہو۔

بچے اپنی سوتیلی ماں کو کسی گوری کے روپ میں قبول نہیں کریں گےاور اگر آپ کے بچے ہوں گے تو وہ ہمیشہ اُلجھن کا شکار رہیں گے اور اُن کا برتاؤ بھی مختلف ہوگا۔

انہوں نے مزید لکھا کہ ہماری شادی پر لوگوں نے ایسی ایسی باتیں کیں لیکن یہ محض باتیں ہی تھیں کیونکہ جلد کی رنگت صرف انسانوں کو ہی پریشان کرتی ہے ورنہ اس سے رشتوں پر کوئی اثر نہیں پڑتا۔

شینرا نے آخر میں لکھا کہ ہزاروں لوگوں کی طرح ہم بھی مثال ہیں کہ رنگت کوئی اہمیت نہیں رکھتی بلکہ کسی بھی مضبوط رشتے کے لیے پیار اہم ہوتا ہے۔

واضح رہے کہ وسیم اکرم کی اہلیہ شنیرا اکرم اپنے شوہر کے علاوہ اپنی سماجی خدمات اور انسانی حقوق کے لیے آواز اُٹھانے کی وجہ سے بھی کافی مشہور ہیں۔

شنیرا اکرم اکثر ہی اپنے ٹوئٹس اور انسٹاگرام پوسٹ میں رنگ و نسل اور نسلی تعصب کے خلاف آواز بلند کرتی نظر آتی ہیں۔