کرونا کے مریض بے حال و پریشان پھر رہے ہیں لا کھو ں روپے خرچ کر نے کے با وجود مریضو ں کے لواحقین کو آ خر میں مر یض کی مو ت کی اطلاع دی جا تی ہے

کراچی ( )کرونا کے مریض بے حال و پریشان پھر رہے ہیں لا کھو ں روپے خرچ کر نے کے با وجود مریضو ں کے لواحقین کو آ خر میں
مر یض کی مو ت کی اطلاع دی جا تی ہے۔ پرائیوٹ ہسپتالو ں میں مسیحا ئی نا م کو بھی نظر نہیں آ تی مر یض کو ہسپتال میں داخل کر کے صرف پینا ڈول دی جارہی ہے دنیا کے تما م کا روبار کرونا کی وجہ سے ٹھپ ہو گئے مگر پرا ئیوٹ ہسپتالوں کا اور میڈیسن و انجکشن بیجنے والوں کا دھندا عروج پر ہے۔مصیبت کی اس گھڑی میں مریضوں اور انکے رشتہ داروں کو

حوصلہ دینے کے بجائے ان سے ساری زندگی کی کما ئی ہو ئی جمع پونجی لیکر پرائیوٹ ہسپتالوں کے مالکا ن اپنی دولت بڑھانے میں پا گلوں کی حد تک جا رہے ہیں،یہ بات کنزیو مر ایسو سی ایشن آف پاکستان کے چئیر مین کو کب اقبال نے کیپ کے دفتر میں میڈیا کے نما ئندو ں سے بات کرتے ہو ئے کہی انہو ں نے کہا کہ لوگو ں نے کرونا سے احتیاط کر نے کے بجائے عید پر دھڑلے سے بلا خوف و خطر شاپنگ کی حکو مت کی ایس او پی کو سِر ے سے نظر انداز کیا جسکی وجہ سے کرونا کے مریضو ں کی تعداد میں اچانک اضافہ نظر آ رہا ہے غریب لو گ سرکاری ہسپتالوں کا رُخ کر رہے ہیں جہاں معیاری سہولتوں کا فقدان نظر آ رہا ہے جبکہ پرائیوٹ ہسپتالو ں نے کرونا مریضوں کے لیے مہنگے پیکج بنوائے ہوئے ہیں جسکے مطابق بغیر وینٹی لیٹر پر ایک دن کے چار جز ایک لاکھ جبکہ وینٹی لیٹر مہیا کرنے کی صورت میں ہی چارجز ڈیڑھ لاکھ ہو جاتے ہیں اگر کو ئی مریض 10دن رہا تو اسکا مطلب ہے اسے 10لاکھ سے پندرہ لا کھ روپے خرچ برداشت کرنا ہوتے ہیں کنزیو مر ایسو سی ایشن آف پاکستان کے چئیر مین کو کب اقبال نے کہا کہ کرونا جیسے موضی مر ض میں مبتلا مریض کو لگا یا جانے والا انجکشن ایکٹمرا بلیک میں 3لاکھ روپے میں فروخت کیا جا رہا ہے اس سلسلے میں اطلاعات کے مطابق امیر لوگوں نے انجکشن کو مہنگے دا موں خرید کر اپنے گھروں میں رکھ لیا ہے کہ وقتِ ضرورت استعما ل کیا جا سکے جبکہ میڈیسن ما رکٹ میں ایکٹمرا انجکشن نا یا ب ہو گیا ہے۔ منا فع خوری اپنی انتہا پر پہنچ گئی ہے اور حکو متی ادارے نہ ہی پرا ئیوٹ ہسپتالو ں کے خلاف کو ئی ایکشن لے رہے ہیں اور نہ ہی مہنگے انجکشن اور دوائیا ں بیجنے والوں کے خلاف کو ئی کا روائی نظر آ رہی ہے، انہو ں نے کہا کہ لگتا ہے انکے دلو ں سے خو فِ خدا ختم ہو گیا ہے۔کو کب اقبال نے صو بائی اور وفا قی حکو مت سے مطالبہ کیا کہ پرا ئیوٹ ہسپتالو ں اور مہنگے انجکشن فروخت کر نے والو ں کے خلاف فوری کریک ڈاؤن کیا جا ئے۔ انہو ں نے کہا کہ افسوس کی با ت ہے کہ حکیمو ں کی تجویز کر دہ انتہا ئی سستی ثنا مکی جو دو دن پہلے 40 روپے کلو دستیا ب تھی وہ اب 2 ہزار سے 3 ہزار روپے فی کلو بیچی جا رہی ہے انہو ں نے مزید کہا کہ ایسا شاید ہی دنیا کے کسی ملک میں ہو تا ہو کہ وقت سے فائدہ اٹھا نے والو ں کے خلا ف کا روائی نہیں ہو تی ہو۔ کسی کو مجا ل نہیں کہ وہ اپنے طور پر چیزوں کی قیمتوں کو طے کرتے جا ئیں مگر پاکستان کے بے حِس تاجرو پرا ئیوٹ ہسپتال مالکان بے خوف و خطر لو ٹ ما ر بلکہ ڈاکہ ما ر رہے ہیں کیونکہ انکو کو ئی لگام دینے ولا نہیں۔ قبل اسکے کے عوام کا صبر کا پیمانہ لبریز ہو جا ئے حکو مت خو د ایسے ہسپتالو ں اوربلیک ما رکٹنگ کرنے والو ں کے خلاف ایکشن لے