کراچی میں سندھ کے مختلف شہروں سے آنے والے پولیس اہلکاروں کے رویے کی شکایات میں اضافہ

کراچی میں سندھ کے مختلف شہروں سے آنے والے پولیس اہلکاروں کے رویے کی شکایات میں اضافہ ۔شہریوں کی جانب سے پولیس اہلکاروں کے رویے اور ان کی کارروائیوں پر غم و غصے کا اظہار کیا جا رہا ہے جس کا اندازہ سوشل میڈیا پر آنے والی مختلف پوسٹوں سے لگایا جا سکتا ہے جن میں کافی عرصے کا اظہار کیا جاتا ہے ۔
جو شہری پولیس اہلکاروں کے رویے کے خلاف شکایات پر کہیں پہ شنوائی نہ ہونے اور انصاف نہ ملنے کی وجہ سے مایوسی کا شکار ہو جاتے ہیں وہ اپنے غصہ سوشل میڈیا پر اتار رہے ہیں ان کی پوسٹیں انتہائی غم و غصے کی عکاسی کر رہی ہیں اور متعلقہ حکام کو اس صورتحال کا نوٹس لینا چاہیے ۔
an -example-from -socialmedia=posts…..
سندھ سے 20 ہزار پولیس والے غیر قانونی طور پر کراچی میں آ کر ڈیوٹی دے کر کراچی والوں کی نوکریوں پر۔۔۔۔۔۔۔۔ ان کے پیٹ و معاش پر لات مار دی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب ان کی انتہا و دیدہ دلیری دیکھیے کہ روز موٹر سائیکل والوں کو روک کر ایسے لوٹ مار کرتے ہیں جیسے کراچی لوٹ مار کا اڈا ہو۔۔۔۔۔۔۔اور یہ لوگ لوٹ مار کے لیئے مقبوضہ کراچی میں بزور قوت داخل ہوئے ہوں۔۔۔۔۔۔۔
پھر کراچی والوں کے ساتھ ان غیر قانونی پولیس والوں کا رویہ دیکھئے۔۔۔۔۔۔۔۔بالکل فرعون بنے ہوئے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔ان کا رعونت سے بھرا رویہ دیکھ کر۔۔۔۔۔سن کر ہی کراچی والوں کا خون کھولتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔یہ لوگ مقبوضہ کراچی والوں کی ایسی بے عزتی کرتے ہیں کہ صاف معلوم ہوتا ہے کہ سندھ پولیس مقبوضہ کراچی کو فتح کرنے کے لیئے کراچی میں داخل ہوئی ہے اور اب ان کے ہاتھوں کراچی والوں کی عزتیں بھی محفوظ نہیں۔۔۔۔۔اب ان غیر قانونی پولیس والوں کی مقبوضہ کراچی میں دیدی دلیری دیکھیئے جو اب اس حد تک بڑھ گئی ہے کہ انہوں نے کراچی والوں کی عورتوں پر بھی ہاتھ ڈالنا شروع کر دیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور تقریبا” روز گاڑیوں کی چیکنگ کے نام پر عورتوں کی بھی کھلے بے عزتی کی جا رہی ہے۔۔۔۔۔۔
اگر یہی حالات رہے تو یوں لگتا ہے جلد مقبوضہ کراچی والے اپنی آزادی کے لیئے آٹھ کھڑے ہوں گے۔۔۔۔ ۔پھر ان غیر قانونی پولیس والوں کو چھپنے کی جگہ بھی نہیں ملے گی۔۔۔۔۔۔۔ان غیر قانونی پولیس والوں کو ڈھونڈ ڈھونڈ کر نکالیں گے پھر چوراہوں پر گھسیٹیں گے۔۔۔پھر ہر کونے۔۔۔۔گلی۔۔۔نکڑ پر فساد پھوٹ پڑیں گے۔۔۔۔۔ہر جگہ بلوے ہوں گے۔۔۔۔۔۔آگ لگلی ہو گئی۔۔۔۔کراچی جل رہا ہو گا۔۔۔۔۔۔۔اور سندھ کا حکمران مقبوضہ کراچی میں چین کی بانسری بجا رہا ہو گا۔۔۔۔۔ اس پوری صورتحال کا اصل ذمہ دار الطاف حسین اور ان کے حواری فاروق ستار۔۔۔۔بابر غوری۔۔۔۔۔۔حیدر عباس رضوی۔۔۔۔۔۔کنور نوید جمیل ۔۔۔۔۔عشرت العباد اور اس قماش کے دیگر حواری ہیں۔۔۔۔۔۔جنہوں نے 30 سال تک اپنے مفادات حاصل کیئے لیکن اگر کراچی والا اپنے ہی مسائل کے لیئے کچھ بولا تو اسے مار کر یا زندہ بوری میں بند کر دیا۔۔۔۔۔جس کی وجہ سے تمام اہل کراچی گذشتہ 30 سال سے بے حس۔۔۔۔۔و بے غیرت ہو گئے ہیں۔۔۔۔۔
اسی لیئے اب الطاف حسین اور ان کے حواری اعلان کرتے کہ کراچی میں جو چاہے غلط سلط کام کرو کوئی پوچھنے والا نہیں ہو گا۔۔۔۔۔۔ منجانب : ممبرز انٹیلیکچول فورم آف پاکستان
https://m.facebook.com/story.php?story_fbid=729703731169464&id=100023895308706&sfnsn=scwspwa&extid=LmZ6o8edpBTnIGAc&d=w&vh=i