ایف ٹی سی میں لگنے والی آگ ۔۔۔۔۔ حقائق جاننے کے دعویدار سامنے آگئے

ان دنوں ملک بھر میں چرچا ہے کہ فائنینس اینڈ ٹریڈ سینٹر ایف ٹی سی بلڈنگ کراچی میں چھٹی منزل پر جو آگ لگی وہ واقعی ایک حادثہ تھا یا جان بوجھ کر آگ لگائی گئی تاکہ اہم ریکارڈ ضائع کیا جا سکے ۔جعلی بینک اکاؤنٹس اور منی لانڈرنگ کے حوالے سے ایف آئی اے جن معاملات کی تحقیقات کر رہی ہے اس میں انتہائی بااثر نام ایسے ہیں جن کے گرد گھیرا تنگ ہوچکا ہے اسی لئے ایف ٹی سی میں لگنے والی آگ کو معنی خیز قرار دیا جا رہا ہے اب اس کیس کے حقائق جاننے کے نئے دعویدار سامنے آگئے ہیں جنہوں نے ایک کھلا خط لکھ کر اس معاملے کی جانب توجہ مبذول کرائی ہے انہوں نے کیا لکھا ہے آئیے آپ بھی پڑھیئے۔

آگ 🔥 کیوں لگائی گئی ؟؟؟

1۔ محترم جناب ڈاکٹر عارف علوی صاحب صدر اسلامی جھموریہ پاکستان
2۔ محترم جناب عمران خان وزیراعظم اسلامی جھموریہ پاکستان
3۔ محترم جناب اسد عمر صاحب وزیر خزانہ اسلامی جھموریہ پاکستان
4۔ محترم جناب جسٹس رٹائیرڈ جاوید اقبال چیئرمین نیب اسلامی جھموریہ پاکستان
5۔ محترم جناب بشیر احمد میمن صاحب ڈائریکٹر جنرل FIA
6۔ محترم جناب عرفان منگی صاحب ڈائریکٹر جنرل نیب سندھ
7۔ محترم جناب سیکریٹری خزانہ پاکستان
8۔ محترم جناب صدر نیشنل بینک آف پاکستان
9۔ محترم جناب ٹی وی اینکر پرسن صاحبان اور نیوز رپورٹر صاحبان
السلام علیکم
جناب اعلی’ آپ تمام سے گذارش ہے کہ 16۔3۔2019 کو کراچی میں فنانس اینڈ ٹریڈ سینٹر (FTC BUILDING) کے 6 فلور 7 فلور میں آگ کیوں لگی اس آگ لگنے کی کیا وجوہات ہیں۔
ہم اس آگ لگنے کی کچھ وجوہات آپکی خدمت میں پیش کرنا چاہتے ہیں۔
1۔ FTC کے 6 فلور 7 فلور پر پاکستان کے سب سے بڑے قومی مالیاتی ادارے NDFC کا ہیڈ آفس تھا اور NDFC نے سال 1973 سے پاکستان کی ترقی کے لیئے پاکستان میں بڑی بڑی انڈسٹریز یعنی
1۔ شگر ملز
2۔ ٹیکسٹائل ملز
3۔ سیمنٹ انڈسٹریز
4۔ پاور پلانٹس اور اس کے علاوہ مختلف انڈسٹریز لگواکر پاکستان کی ترقی میں اہم کردار ادا کیا ہے مگر سال 2000 میں چیئرمیں NDFC میاں آصف سعید نے NDFC سے لیا ہوا قرض تقریبا 88 ارب روپیہ واپسی کے لیئے سخت اقدامات کیئے جس کی وجھ سے سال 2000 میں ہی تقریبا 22 ارب روپے NDFC کے نادہندگان سے واپسی (RECOVERY) ہونے والی تھی مگر پاکستان کی اشرافیہ بڑے بڑے سیاستدانوں نے NDFC کے کچھ بڑے آفیسرز سے ملکر سال 2001 میں اس وقت کے بادشاہ سلامت پرویز مشرف اور اس کے وزیر خزانہ شوکت عزیز سے NDFC کو بند کروادیا اور یوں پاکستان کی قوم کی ترقی کے نام پر (IMF. WORLD BANK اور دنیاکی بڑی بینکوں) سے لیا ہوا قرضہ پاکستان کی غریب قوم کے کھاتے میں ڈال کر بڑے لوگوں محفوظ کردیا گیا جس کا تمام ریکارڈ FTC BUILDING کے 6 فلور پر تھا کو جلانے کی کوشش کی گئی کیونکہ اس وقت صدر پاکستان۔ چیف آف آرمی سٹاف۔ وزیر اعظم پاکستان۔ چیئرمین نیب۔ سپریم کورٹ اور پاکستان کے تمام وفادار ادارے ملک کو بچانے کے لیے پاکستان کے لٹیروں سے غریب قوم کی لوٹی ہوئی دولت واپس کروانے کی کوشش کر رہے ہیں اس لیئے NDFC کا ریکارڈ جلانے کی کوشش کی گئی مگر اللہ تعالی نے اس قوم پر اپنا رحم کیا اور NDFC کے تمام ریکارڈ کو بچا لیا۔ یہ مکمل ریکارڈ ہمارے پاس بھی موجود ہے۔
آپ سے گذارش ہے مہربانی کرکے یہ پیغام اپنے تمام دوستوں/ میڈیا/اخبار/ ملک کے اداروں اور پاکستان کے وفاداروں کو بھیجیں تاکہ پاکستان کی قوم کا لوٹا ہوا خزانہ لٹیروں سے واپس کروایا جائے۔
ہم مکمل ریکارڈ کے ساتھ پاکستان کے ہر ادارے۔ TV CHANNEL کے سامنے پیش ہونے کے لیئے تیار ہیں۔
امتیاز علی کھہڑو NDFC
03002557663
قمرزمان NDFC
03218132007

اپنا تبصرہ بھیجیں