یہ عجیب منطق ہے کورونا کی وجہ سے احتساب کے ادارے کام روک دیں ‘ ہمایوں اختر خان بعض پبلک سیکٹرانٹر پرائزز بلیک ہولز ہیں اور ان کے نقصانات کو روکنا نا گزیر ہے ‘ سینئر مرکزی رہنما

پاکستان تحریک انصاف کے سینئر مرکزی رہنما و سابق وفاقی وزیر ہمایوں اختر خان نے کہا ہے کہ یہ عجیب منطق ہے کہ کورونا وائرس کی وباء کی وجہ سے احتساب کے ادارے اپنا کام روک دیں ،بعض پبلک سیکٹرانٹر پرائزز بلیک ہولز ہیں اور ان کے نقصانات کو روکنا نا گزیر ہے ،اسٹیل ملز کے حوالے سے 45روز میں حتمی فیصلہ ہوناہے کہ اس کی مکمل نجکاری کی جائے ،اس کی آنر شپ حکومت کے پاس رہے اور پروفیشنل مینجمنٹ لائی جائے ۔ میڈیا کیلئے جاری کئے گئے اپنے بیان میں ہمایوں اختر خان نے کہا کہ جب سے موجودہ حکومت آئی ہے اس کی کوشش ہے کہ تمام پبلک سیکٹر انٹر پرائزز کی گورننس کو بہتر کیا جائے جس کیلئے ان کے بورڈ ز کوبہتر بنایا گیا ہے ۔ عشرت حسین کی سربراہی میں قائم کمیٹی نے کام کیا ہے جس کے مطابق بعض ادارے ایسے ہیں جن کے بارے میںیہ رپورٹ ہے کہ ان میں اصلاح ہو سکتی ہے لیکن بعض ایسے ہیں جن میں کسی صورت منافع ممکن نہیں اور وہ بلیک ہولز ہیںاور وہ اربوں روپے کا خسارہ کرتے رہیں گے ۔ انہوںنے کہا کہ نجکاری کے حوالے سے باضابطہ قانون اور طریق موجود ہے ، جہاں تک نجکاری کی بات ہے تو اس پر تقریباًتمام سیاسی جماعتوں میں اتفاق رائے ہے ۔ کسی بھی ادارے کی نجکاری کے دوران گولڈن ہینڈ شیک کی شق موجود ہوتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں جب تک کورونا کی صورتحال ہے تو کیا تمام کام روک دئیے جائیں اور اربوں روپے کا خسارہ ہوتا رہے ۔ یہ بھی عجیب منطق ہے کہ کوروناوائرس کی وباء کی وجہ سے احتساب کے ادارے اپناکام روک دیں ۔ انہوںنے کہا کہ حکومت کسی بھی طرح کا فیصلہ عجلت کی بجائے انتہائی سوچ بچار کے ساتھ کرے گی اور ادارے کے ملازمین کے حوالے سے بہترین فیصلہ کیا جائے گا۔
میڈیا سیل ہمایوں اختر خان