زنجیروں سے جکڑ کر زمین میں دفن کرنے کا معاملہ کیا ہے ؟

سوشل میڈیا پر اس حوالے سے بحث ہورہی ہے کہ ایک قوم پرست رہنما نے یہ وصیت کیوں کی کے اسے غسل اور کفن نہیں دینا اور نہ ہی نماز جنازہ پڑھانا بلکہ میری لاج کو زنجیروں سے جکڑ کر زمین میں دفن کر دینا ۔

کیا یہ بات سچ ہے یا جھوٹ ؟

اس حوالے سے سوشل میڈیا صارفین اپنی اپنی رائے کا اظہار کر رہے ہیں اور اس حوالے سے جو پوسٹ میں سامنے آئی ہیں ان پر تنقید غم و غصہ اور حیرت کا اظہار بھی کیا جارہا ہے ابھی تک اس بات کی کسی ذمہ دار شخصیت نے تصدیق نہیں کی کہ یہ وصیت اور اس والے سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی تصویر اور سندھی زبان میں لکھی گئی تحریر اصلی ہے یا جھوٹی ؟


لیکن قوم پرستی کے حوالے سے جو لوگ بحث میں الجھے ہوئے ہیں وہ ایسی چیزوں پر ہو بحث کر رہے ہیں اور ان کی جانب سے مختلف قسم کے تبصرے سامنے آرہے ہیں اور مختلف حوالے دیئے جا رہے ہیں ۔
ضرورت اس بات کی ہے کہ سرکاری سطح پر اس قسم کی باتوں اور پوسٹ کا نوٹس لیا جائے اور ان کے اصلی یا جھوٹے ہونے پر کوئی ٹھوس موقف سامنے آنا چاہیے تاکہ سوشل میڈیا صارفین کسی کنفیوژن کا شکار نہ ہو اور انہیں اصل حقائق سے آگاہی حاصل ہو ۔