پیپلز پارٹی کے سی ای سی کے رکن اور ممبر قومی اسمبلی نواب یوسف تالپور نے وزیراعظم کو خط لکھا ہے کہ ارسا کے سندھ کے تین ممبران کی تبدیلی خلاف قانون ہو گی

پیپلز پارٹی کے سی ای سی کے رکن اور ممبر قومی اسمبلی نواب یوسف تالپور نے وزیراعظم کو خط لکھا ہے کہ ارسا کے سندھ کے تین ممبران کی تبدیلی خلاف قانون ہو گی

کیونکہ ارسا ایک خد مختار باڈی جس میں کسی قسم کی تبدیلی سی ای سی(Common Intrest Commettee) کی مرضی سے ہی اس میں کسی قسم کی تبدیلی ہو سکتی ہے۔ ممبران کو شامل کرتے وقت یا انہیں تبدیل کرتے وقت صوبوں سے مشورہ سے اور سی ای سی کی مرضی سے کیا جاتا ہے لیکن سندھ کے ممبران کی تبدیلی کی جو بات ہو رہی ہے

وہ غیر قانونی عمل ہے۔انہوں نے لکھا ہے کہ قومی اسمبلی کی اسٹینڈنگ کمیٹی برائے واٹر ریسوسز کو بھی اعتماد میں نہیں لیا گیا۔انہوں نے اپنے خط میں لکھا ہے کہ اسٹینڈنگ کمیٹی کے چیئرمین کی حیثیت سے لاک ڈاون کے دوران جب میں نے ویڈیو کانفرنس کرنی چاہی تو قومی اسمبلی نے اس سلسلے میں کوئی تعاون نہیں کیا۔انہوں نے وزیراعظم کو اپنے خط میں یاد دلایا کہ اس طرح کے اقدامات سے صوبوں میں احساس محرومی پیدا ہو گا۔اس لیئے فوری طور پر اس فیصلے اور اقدامات سے گریز کیا جائے اور خود کوئی فیصلہ کرنے کے بجائے صوبوں کے مشورے سے سی ای سی کے ذریعے ممبران کو تبدیل یا شامل کیا جائے۔