پھلوں کے شہنشاہ کی ایسی بے قدری پہلے کبھی نہ دیکھی

بچل لغاری : اللہ رحم فرمائے کورونا کے عذاب نے شہروں کے ساتھ غریب کاشتکاروں اور ہاریوں کو بھی چاروں طرف سے گھیر لیا ہے پانی کی قلت سیم و تھور بیج و کھاد اور زرعی ادویات کی مہنگائی اپنی جگہ مگر افسوس کہ گندم کی خریداری کے سرکاری مراکز بر وقت نہ کھولنے پر کاشتکار ڈھائی سو روپے فی بوری کم قیمت پر تاجروں کو فرخت کرنے مجبور ہو گئے اب حکومت چھاپے مار کر ضبط کر رہی ہے آم کے ٹھیکیدار بھاگ گئے پھلوں کے شہنشاہ کی اتنی بے قدری پہلے کبھی دیکھی نہیں تھی رہی سہی کسر ٹڈی دل کے لشکروں نے پوری کردی پتہ پتہ گھا گئے ساہوکاروں نے ہاتھ کھیچ لیا اور ستر فیصد آبادی کے سروں پر ہاتھ آگئے ہیں وفاقی حکومت کو فوری طور پر توجہ دے کر صوبے سندھ میں سولا ایکڑ سے کم چھوٹے زمینداروں کے ایک لاکھ روپے تک کے قرض معاف کرنے اور پیداواری لاگت کے لئے کم سے کم ایک لاکھ روپے فی پاس بک کے حساب سے آسان شرائط پر نئے قرضے فراہم کرنے کے لئے زرعی ترقیاتی بینک کو خصوصی سندھ زرعی رلیف پیکیج کا اعلان کرنا چاہیے۔