گورنر راج لگانے کے پی ٹی آئی کے مطالبے کی پر زور مذمت کرتے ہیں

صوبائی وزیر اطلاعات ، بلدیات، جنگلات وجنگلی حیات و مذہبی امور سید ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ ہم گورنر راج لگانے کے پی ٹی آئی کے مطالبے کی پر زور مذمت کرتے ہیں انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت پر یہ الزام لگایا جاتا ہے کہ انہوں نے ہر ایک شعبہ کو خراب کر دیا ہے اور اس کو بنیا د بنا کر سندھ میں گورنر راج لگانے کی بات کی جاتی ہے

syed nasir hussain shah saeed ghani sindh coronavirus
جبکہ حقیقت میں ایسا نہیں ہے سندھ میں ہر شعبہ میں ریکارڈ ترقی ہوئی ہے اور یہ لوگ نہیں چاہتے کہ سندھ مزید ترقی کرے اسی وجہ سے گورنر راج لگا کر منتخب حکومت کو ہٹانے کی باتیں کی جارہی ہیں ۔ سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ ایسا کرنا کوئی آسان نہیں اور یہ لوگ صرف بڑھکیں مار رہے ہیں اور اگر ایسا کیا تو ان کو پتا چل جائے گا کہ اس کے کیا نتائج بر آمد ہوتے ہیں کیوں کہ عوام اپنی منتخب کی ہوئی حکومت کے ساتھ ہیں اور وہ کوئی بھی غیر آئینی قدم برداشت نہیں کریں گے۔ سیدناصر حسین شاہ نے کہا کہ سپریم کورٹ کے احکامات کو من و عن عمل کیا جائے گا اور سپریم کورٹ کا جو بھی فیصلہ آیا ہے اس پر بحث مناسب نہیں ہے اور نہ اس پر کوئی تبصرہ کرنا چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت نے 26فروری کو پہلا کیس آتے ہی پارٹی چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کی ہدایت پر ماہرین پر مشتمل ایک ٹاسک فورس بنا دی تھی جس میں ہر شعبہ بشمول صحت کے ماہرین بھی شامل تھے اور بین الاقوامی معیار کے مطابق اور WHO کی ہدایات پر عمل کرتے ہوئے لاک ڈاﺅن کا فیصلہ کیا جس کو بعد میں پورے ملک میں نافذ کیا گیا ۔ انہوں نے کہا کہ یہ بہت مشکل فیصلے تھے لیکن ہمارا شروع دن سے فوکس عوام کی صحت تھی جس پر ہم کوئی سمجھوتہ نہیں کرنا چاہتے تھے ۔ اس لئے ہمیں یہ مشکل فیصلے کرنے پڑے جو کہ وقت کی ضرور ت تھے اور پوری دنیا میں ان فیصلوں کی تائید بھی کی گئی اور ان کی حوصلہ افزائی بھی کی گئی ۔ لیکن ہماری پارٹی کی پالیسی ہے کہ ہمیں ہمارے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کی طرف سے بھی ہدایات ہیں کہ ہمیں ہر قومی مسئلہ پر سب کے ساتھ مل کر کام کرنا ہے اور وفاقی حکومت کو سپورٹ کرنا ہے اسی لئے ہم ابتدا سے ہی یہ کہ رہے ہیں اس کورونا کی عالمی وباءکے سلسلے میں ایک قومی پالیسی بنائی جائے اور وزیر اعظم صاحب کو اس معاملہ کو اون کرنا چاہئے تاکہ پورے ملک کی ایک سمت متعین ہوسکے لیکن بد قسمتی سے جب وفاق کے ساتھ اجلاس میں ایک بات طے ہو جاتی ہے تو اسی پر ان کے وزرا اور مشیران صرف صوبہ سند ھ پر تنقید کرنی شروع کر دیتے ہیں ۔ لیکن جب وہی معاملہ دیگر صوبوں میں نافذالعمل کیا جاتا ہے تو کوئی بات نہیں کی جاتی لیکن تنقید صرف اور صرف سندھ حکومت پر ہی ہوتی ہے ۔ سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ جس طرح سپریم کورٹ کے احکامات آئے ہیں ان پر مکمل عمل درآمد کیا جائے گا اور تما م تر احتیاطی تدابیر کے ساتھ بازار اور مارکیٹ کھولی جائیں گی اور ہم عوام سے بھی اپیل کرتے ہہیں کہ وہ تمام احتیاطی تدابیر پر عمل کریں اس میں ان کاا پنا ہی فائدہ ہے یہی کوشش کریں گے کہ لوگوں سے ایس او پی سپر اور احتیاطی تدابیر پر عمل کروائیں بیماری کی وجہ سےسید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ ہم نے شروع دن سے ہی کہہ دیا تھا کہ میں پرائم منسٹر کے ساتھ مل کر کام کرنا ہے صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ قومی پالیسی پر ہم اپنی حکومت کو سپورٹ کریں گے۔انہوںنے کہا کہ ایس او پیز عمل کرنا سب کا فرض ہے ۔ اور اس سلسلے میں سندھ حکومت اپنا کردار ادا کرتی رہے گی۔ صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ تمام سیاسی جماعتوں کو چاہے وہ اپوزیشن میں ہوں قومی پالیسیوں کے معاملے پر سب کو ایک ہونا چاہیے ۔ انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف اس معاملے میں بہت زیادہ خوش قسمت ہے کہ ان کو ایک تجربہ کار ا پوزیشن ملی ہے جو کہ اہم قومی معاملات میں اس کو سپورٹ کرتی چلی آئی ہے ۔ایک سوال کے جواب میں صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ بھارت کی ہمیشہ سے یہی پالیسی رہی ہے کہ وہ پاکستان پر الزام تراشی کرتا رہا ہے اور طالبان کے معاملے میں بھی سیاست کرنے کی کوشش کر رہا ہے لیکن سندھ حکومت اس اہم معاملے پر وفاقی حکومت کو مکمل طور پر سپورٹ کریں گی۔ 
ہینڈ آﺅٹ نمبر