کراچی کی معروف لکی ٹیکسٹائل ملز کی من مانیاں کورونا کے نام پر روزانہ کی بنیاد پر ورکرز کو نوکری سے فارغ کیا جانے لگا

لکی ٹیکسٹائل ملز مالکان کا سندھ حکومت کی رٹ کو چیلنج، حکومت فیکٹری مالکان کے آگے بے بس، آنکھیں بند کرلیں
 لکی ٹیکسٹائیل ملز انتظامیہ کا ورکرز پر تشدد خواتین کو دھکے دے کر فیکٹری سے باہر نکال دیا
صبح سات بجے سے خواتین اور مرد حضرات اپنے حق کے لئے فیکٹری کے باہر موجود
ایڈمن مینجر اور فلور مینجر سجاد نے زبردستی ورکرز سے دستخط کروائے
دستخط کے بعد بتایا گیا کہ انہیں‌ زبردستی نکالا نہیں‌ گیا بلکہ وہ خود ہی جا رہے ہیں
متاثرین کا شدید احتجاج، اس سے قبل نکالے گئے ورکرز کو تاحال واجبات ادا نہیں کیے گئے
2 ماہ کا کرایہ ادا کرنا ہے، کہاں سے ادا کروں گی،متاثرہ خاتون
خاوند بیمار ہیں میں ہی بچوں کا پیٹ‌ پالنے کے لیے ملازمت کرتی ہوں گزارا کیسے ہوگا، متاثرہ خاتون
حکومت سو رہی ہے روزانہ کئی سو افراد نکالے جارہے ہیں جوکہ خلاف قانون ہے، متاثرہ شخص
مظاہرین کی حکومت سے انصاف کی اپیل ، فیکٹری مالکان کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ