اگر ایسا ہی رویہ رہا تو ہم اس جاری وبائی بیماری سے چھٹکارا نہیں پاسکیں گے

کراچی (13 مئی): وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ کورونا وائرس کے 731 مزید کیسز کی تشخیص ہوئی ہے جب 4223 نمونے ٹیسٹ کیے گئے جبکہ 16 دیگر مریض انتقال کرگئے ہیں اس طرح مجموعی مریضوں کی تعداد 13434 میں سے اموات کی تعداد 234 ہوگئی ہے۔اس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ اب بھی ہمیں انفیکشن اور اموات میں اضافے کا سامنا ہے لہٰذہ ہمیں ایس او پیز پر اسکی اصل روح کے مطابق عمل کرنا ہوگا۔ وزیراعلیٰ ہاؤس سے جاری ایک بیان میں وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ 4223 ٹیسٹ کئے گئے جس میں سے731 مزید کیسز سامنے آئے جو کل ٹیسٹوں کا 17.3 فیصد بنتا ہے۔

syed murad ali shah coronavirus update

انہوں نے کہا جیسے ہی ہم ٹیسٹوں کی تعداد میں اضافہ کرتے جارہے ہیں اس سے زیادہ کیسز کا پتہ چل رہا ہے۔ محکمہ صحت نے اب تک 103340 ٹیسٹ کئے ہیں اور 13341 کیسز کی تشخیص ہوئی ہے جو کل ٹیسٹوں کا 12.9 فیصد بنتا ہے ۔ وزیر اعلیٰ سندھ نے کہا کہ 16 مزید مریض جان بحق ہوگئے ہیں اور اب تک اموات کی تعداد 234 یعنی 1.7 فیصد تک پہنچ چکی ہے۔ انہوں نے کہا اللہ کے فضل سے ہماری اموات کا تناسب نسبتاًکم ہے اور ہم ایس او پیز کو نافذ کرکے اس پر قابو پانے کی کوششیں کر رہے ہیں۔ وزیر اعلیٰ سندھ نے کہا کہ سندھ بھر میں 10272 مریض زیر علاج ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ 8840 مریض یعنی مجموعی طور پر 86 فیصد گھروں میں آئسولیشن میں ہیں جہاں فون کے ذریعے ڈاکٹرز انکی دیکھ بھال کررہے ہیں، 919 قرنطینہ مراکز اور 513 مختلف اسپتالوں میں زیر علاج ہیں۔ مراد علی شاہ نے بتایا کہ 606 مریض صحتیاب ہو کر اپنے گھروں کو واپس جاچکے ہیں۔ انہوں نے کہا اب تک 2835 مریض صحتیاب ہوچکے ہیں جبکہ صحتیاب ہونے کا تناسب 21.3 فیصد ہے جوکہ حوصلہ افزا بات ہے لیکن ہمیں اس میں مزید بہتری لانا ہوگی لیکن یہ سب تب ممکن ہوگا جب لوگ رضاکارانہ طور پر ٹیسٹ کروانا شروع کردیں ۔
کراچی:
وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ کروناوائرس کے 731 کیسوں میں سے کراچی میں 585 کیسز رپورٹ ہوئے ہیں جس میں ضلع شرقی 140 ، جنوبی 127 ، ملیر 116 ، وسطی 85 ، غربی 60 اور کورنگی 57 شامل ہیں۔ مراد علی شاہ نے کہا ماہرین اس طرف اشارہ کر رہے تھے کہ مئی کے مہینے میں کورونا وائرس کے کیسز میں اضافہ دیکھا جائے گا۔ہم نے تاجروں اور عوام کی اس یقین دہانی پر لاک ڈاؤن کو آسان کردیا ہے کہ معاشرتی دوری ، ماسک پہننے اور ہجوم سے گریز کرنے کی ایس او پیز پر عمل پیرا ہونگے لیکن نتائج اس کے برعکس ہیں ۔ انہوں نے اپنی افسردگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اگر ایسا ہی رویہ رہا تو ہم اس جاری وبائی بیماری سے چھٹکارا نہیں پاسکیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اموات کی تعداد سے پتہ چلتا ہے کہ 4.6 فیصد مریضوں کی عمریں 51 سے 60 سال کے درمیان 8.5 فیصد، 61 سے 70 سال کی عمر کے درمیان 11.5 فیصد 71 سے 80 سال کے درمیان اور 22.5 فیصد 81 اور اس سے زیادہ عمر کے ہیں جوکہ جانبرنہ ہوسکے۔ مراد علی شاہ نے اموات کی صنفی تقسیم کا اشتراک کرتے ہوئے انکشاف کیا کہ 76 فیصد مرد اور 24 فیصد خواتین ہیں۔
دیگر اضلاع:
صوبے کے دیگر اضلاع کے بارے میں گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ سندھ نے بتایا کہ لاڑکانہ میں 24 ، حیدرآباد میں 22 ، 14 گھوٹکی ، 10 سکھر ، 8کندھ کوٹ – کشمور ، 7شکار پور ، 5شہید بینظیر آباد، سجاول اور ٹنڈو محمد خان میں 4-4، جیکب آباد اور نوشہروفیروز میں 2-2 اور عمرکوٹ ، خیرپور ، قمبر شہدادکوٹ اور جامشورو میں 1-1 کیسز کا پتہ چلا ہے۔
ہیلپ لائین:
وزیراعلیٰ سندھ نے سندھ مینٹل ہیلتھ اتھارٹی ہیلپ لائن کا افتتاح کیا، وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے بدھ کے روز دماغی صحت کے مسائل سے دوچار افراد کی مدد کیلئے قائم سندھ مینٹل اتھارٹی ہیلپ لائن 642-117-111-021 & 0221 کا آغاز کیا۔ مراد علی شاہ نے کہا کہ ہیلپ لائن کو صرف جاری کورونا وائرس پھیلنے کے دوران نفسیاتی بحران پر قابو پانے کیلئے تیار کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کورونا وائرس نے لوگوں میں جاری ذہنی تناؤ ، افسردگی ، اضطراب اور دیگر نفسیاتی مسائل کو فروغ دیا ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ صوبے کے لوگ کہیں سے بھی فون کرسکتے ہیں تاکہ وہ اپنے کیسز ماہرین سے شیئر کرکےاسکے مطابق رہنمائی حاصل کرسکیں۔ قبل ازیں چیئرمین سندھ مینٹل ہیلتھ اتھارٹی ڈاکٹر کریم خواجہ نے وزیراعلیٰ سندھ کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کے نمبر642-117-111کے ساتھ ہیلپ لائن قائم کی گئی ہے۔ اگر فون نمبر 021 کوڈ سے ڈائل کیا جائے گا تو یہ جناح پوسٹ گریجویٹ انسٹیٹیوٹ، کراچی سے منسلک ہوگا اور جب فون نمبر کوڈ 0221 کے ساتھ ملایا جائے گا تو وہ سر کاواجی جہانگیر انسٹیٹیوٹ آف سائکاریٹری ، حیدرآباد سے منسلک ہوجائے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ دونوں اسپتالوں میں معروف نفسیاتی ماہر کال کرنے والوں کی رہنمائی کریں گے۔ ہیلپ لائن کی سہولت صبح 8 بجے سے سہ پہر 3 بجے تک دستیاب رہے گی اور آئندہ ضرورت کے مطابق اس وقت میں توسیع کی جائے گی۔ وزیراعلیٰ سندھ نے ہیلپ لائن قائم کرنے کی ڈاکٹر کریم خواجہ کی کاوششوں کو سراہا ۔
عبدالرشیدچنا
میڈیا کنسلٹنٹ وزیراعلیٰ سندھ