دیامربھاشا ڈیم پر تعمیراتی منصوبہ بندی، فوری تعمیر کا حکم : وزیر اعظم عمران خان

ترتیب و تخریج:  طارق اقبال 

دیا مربھاشا ڈیم پر تعمیراتی منصوبہ بندی’ فوری تعمیر کا حکم: وزیر اعظم عمران خان
دیامر بھاشا ڈیم کی تعمیر شروع کرنے کا اعلان ایک تاریخی خبر ہے: معاون خصوصی برائے اطلاعات لیفٹیننٹ جنرل (ر) عاصم سلیم باجوہ
جولائی 2018ء میں چیف جسٹس سپریم کورٹ جسٹس ثاقب نثار نے حکومت کو بھاشا ڈیم کی تعمیر کا حکم جاری کیا۔ اور تمام پاکستانیوں سے عطیات کی اپیل کی۔
دیامربھاشا ڈیم پر تعمیراتی منصوبہ بندی پر اظہار اطمینان کرتے ہوئے’ وزیر اعظم عمران خان نے اس کی فوری تعمیر کا حکم دیا ہے۔ وزیر اعظم کا کہنا ہے کہ پانی کے ذخائر کو محفوظ بنانا حکومت کی ترجیحات میں شامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھاشا ڈیم کی تعمیر شروع ہونے سے تعمیراتی کام میں مقامی سامان اور افرادی قوت کے استعمال سے بڑے پیمانے پر روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے۔
وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے اطلاعات لیفٹیننٹ جنرل(ر)عاصم سلیم باجوہ کے مطابق دیامر بھاشا ڈیم کی تعمیر شروع کرنے کا اعلان ایک تاریخی خبر ہے۔ بھاشا ڈیم کی تعمیر کا تازہ تخمینہ 1400ارب روپے کے لگ بھگ ہے۔ ابتدائی طور پر کام کرنے والے عملے کے لیے رہائشی کالونی، سڑکوں اور دیگر ضروری ڈھانچے پر کام لگ بھگ مکمل ہو چکا ہے۔ گلگت بلتستان کے علاقے میں تعمیر ہونے والے بھاشا ڈیم سے 4500میگاواٹ بجلی حاصل ہونے کا امکان ہے جبکہ اس میں 6.40ملین ایکڑ فیٹ پانی ذخیرہ کیا جا سکے گا۔ پانی ذخیرہ کے لیے200مربع کلو میٹر کا علاقہ منصوبے میں شامل کیا گیا ہے، بھاشا ڈیم توانائی کی قلت کے شکار پاکستان کے لیے ایک مفید منصوبہ ہے تا ہم ماہرین کے مطابق یہ کالا باغ ڈیم کا متبادل نہیں ہو سکتا-

جولائی 2018ء میں چیف جسٹس سپریم کورٹ جسٹس ثاقب نثار نے حکومت کو بھاشا ڈیم کی تعمیر کا حکم جاری کیا۔ جسٹس ثاقت نثار نے مہمند اور بھاشا ڈیم کی تعمیر کے لیے اپنی جیب سے 10لاکھ روپے دیئے اور تمام پاکستانیوں سے عطیات کی اپیل کی۔ اس فنڈ میں مسلح افواج، سرکاری ملازمین، نجی اداروں اور ان کے ملازمین اور عام افراد نے عطیات جمع کرائے۔ یہ عطیات بارہ ارب روپے کے لگ بھگ ہو چکے ہیں۔ یقینا اس منصوبے کو شروع کرنے کے لیے ساری رقم ایک ساتھ درکار نہیں ہو گی تا ہم ڈیم کے ابتدائی ڈھانچے کے لیے 5ارب ڈالر اور بعد میں پانی ذخیرہ اور چالو کرنے پر 7ارب ڈالر کا خرچ ہو گا۔ پاکستان توانائی کی کمی کا شکار ہے۔ آئی پی پیز نے تیل سے بجلی پیدا کر کے پاکستانی مصنوعات کی لاگت اس قدر بڑھا دی ہے کہ ہماری مصنوعات مسابقت کے قابل نہیں رہ گئیں۔ پن بجلی کے منصوبوں کو مسلسل تاخیر کا شکار کیا جاتا رہا ہے۔ اس سے توانائی مہنگی ہوئی اور ملکی ضروریات پوری کرنے میں بری طرح ناکامی کا منہ دیکھنا ہوا۔ دنیا کے جس ملک نے ترقی کی اس نے توانائی کو سستا بنانے پر توجہ دی۔بھاشا ڈیم کسی ایک حکومت اور حکمران کا کریڈٹ نہیں۔ پرویز مشرف سے لے کر عمران خان تک ان کوششوں میں شامل رہے ہیں۔
سابق چیف جسٹس ثاقب نثار اور آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اس منصوبے میں معاونت کا فریضہ انجام دیتے رہے ہیں۔ سب سے بڑھ کر پاکستان کے عوام نے ایسے منصوبوں کی تکمیل کے لیے بہت دعائیں کیں اور حسب استطاعت عطیات جمع کرائے، ڈیم تعمیر کرنے کی خبر ان تمام پاکستانیوں کے لیے خوش کن اور امید افزا ہے۔ یاد رہے کہ چند ماہ قبل مہمند ڈیم کی تعمیر کا کام شروع ہو چکا ہے، وزیر اعظم خطے کی صورت حال، بھاشا ڈیم کے حوالے سے سابق تنازعات اور مالی وسائل کو دیکھتے ہوئے اس امر کی خصوصی نگرانی کا انتظام فرمائیں کہ منصوبہ کسی داخلی یا بین الاقوامی تنازع کا شکار ہو کر مزید تاخیر کا شکار نہ ہو۔ دوسری طرف کالا باغ ڈیم پاکستان کی توانائی اور زرعی ضروریات کے لیے ناگزیر ہے۔ اس کو سیاست کی دلدل سے نکالنے کے لیے بھی چارہ جوئی کی جانی چاہئے۔