کورونا وائرس : مساجد میں محدود پیمانے پر اعتکاف کی تیاریاں

لاہور: کورونا وائرس اورلاک ڈاؤن کی وجہ سے اس بار رمضان المبارک میں اجتماعی اعتکاف نہیں ہوں گے تاہم مقامی مساجد میں چار سے پانچ افرادالگ الگ حجروں میں اعتکاف بیٹھ سکیں گے۔
رمضان المبارک کے دوران ملک بھرمیں لاکھوں فرزندان اسلام آخری عشرے میں اعتکاف بیٹھتے ہیں تاہم اس سال کورونا وائرس اورلاک ڈاؤن کی وجہ سے ملک بھرمیں اجتماعی اعتکاف کے اجتماعات منسوخ کردیئے گئے ہیں، محکمہ اوقاف پنجاب کے ترجمان نے بتایا کہ رمضان المبارک کے دوران ناصرف سحری اورافطاری کی تقریبات منسوخ کردی گئی ہیں بلکہ اوقاف کے زیرانتظام مساجد میں اجتماعتی اعتکاف بھی نہیں ہوگا، انہوں نے وضاحت کی کی سنت رسول ﷺ کی ادائیگی کے لئے مساجد میں چار سے پانچ لوگ اعتکاف بیٹھیں گے اوران کے لئے بھی الگ الگ حجرے بنائے جائیں گے۔
پاکستان میں اجتماعی اعتکاف کا سب سے بڑااجتماع منہاج القرآن کے زیراہتمام لاہورمیں ہوتا ہے جس میں اندرون وبیرون ملک سے کم وبیش 25 ہزارمردوخواتین شریک ہوتے ہیں۔تاہم منہاج القرآن انتظامیہ نے بھی اس سال شہراعتکاف کومنسوخ کردیا ہے۔اسی طرح جامعہ نعیمیہ،جامعہ اشرفیہ، بادشاہی مسجد، جامع مسجد داتادربار، جامعہ منصورہ سمیت دعوت اسلامی کے زیراہتمام ہزاروں مساجد میں اجتماعی اعتکاف کے پروگرام منسوخ کردیئے گئے ہیں۔
اسلامی نظریاتی کونسل کے رکن اورجامعہ نعیمیہ لاہورکے سربراہ ڈاکٹرراغب حسین نعیمی نے بتایا رمضان المبارک میں اعتکاف بیٹھنا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت ہے، لیکن اس وقت ہمیں جس وبا کا سامنا ہے اس میں انسانی جانوں کو بچانا بھی مقدم ہے، ہم اعتکاف کو ختم نہیں کریں گے لیکن مسجد میں صرف تین،چارلوگ ہی اعتکاف بیٹھیں گے، اجتماعی اعتکاف نہیں ہوگا،اس حوالے سے جامع نعیمیہ کی طرف سے جاری فتوی میں کہا گیا ہے کہ مردگھروں میں اعتکاف نہیں بیٹھ سکتے، ایس اوپیز پرعمل درآمد کرتے ہوئے مساجدمیں ہی اعتکاف ہوگا۔بچوں ، بزرگوں اوربیمارافرادکو اعتکاف نہ بیٹھنے دیاجائے۔
علامہ زبیراحمدظہیر کہتے ہیں رمضان المبارک کے آخری عشرہ میں مرد حضرات کا مسجد میں اعتکاف بیٹھنا سنت مؤکدہ علی الکفایہ ہے ۔ کفایہ کا مطلب ہے کہ محلہ /بستی میں سے ایک یا دو بندے بھی مسجد میں اعتکاف بیٹھ جائیں توسب کو کفایت کر جائے گا یعنی اس حوالے سے محلہ وبستی والوں سے باز پرس نہ ہوگی۔ مرد مسجد میں اورعورتیں گھروں میں اعتکاف بیٹھیں ۔انہوں نے کہا ہر مسجد میں اعتکاف ہوسکتا ہے ۔کورونا وائرس کی وجہ سے احتیاطی تدابیر بجا لاتے ہوئے مساجد میں اعتکاف کیا جائے اور اعتکاف کی حقیقت پر غور کیا جائے تو یہ لوگوں سے الگ تھلک ہو کر اللہ تعالیٰ کے گھر میں عبادت کرنے کا نام ہے ۔ دوسرے لفظوں میں یہ کہنا غلط نہ ہوگا کہ اعتکاف سوشل ڈسٹنس (سماجی دوری) والی عبادت ہے اوراعتکاف رسول مکرم ﷺ کی محبوب سنت ہے۔ دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ اپنے محبوب مکرم ﷺ کے توسل سے عالم اسلام و اہل پاکستان کو اس موذی وباء سے جلد نجات عطا فرمائے۔