تنخواہ اور لیوانکیشمنٹ ادائیگی سے متعلق ضروری وضاحت- دو روز میں رقم واٹربورڈ کے اکاونٹ میں منتقل ہونے کے بعد بقیہ ملازمین کو بھی تنخواہوں کی ادائیگی کردی جائے گی

تنخواہ اور لیوانکیشمنٹ ادائیگی سے متعلق ضروری وضاحت

واٹربورڈ ملازمین کو تنخواہوں کی ادائیگی اور لیوانکیشمنٹ کے حوالے سے واٹربورڈ ملازمین کے مختلف فورم پر
چہ مگیوئیاں ،بحث ومباحثہ بے چینی اور تشویش کا اظہار کیا جارہاہے ،


اس لئے ضروری ہوگیا ہے کہ اس ضمن میں وضاحت اور صورتحال سے آگاہ کیا جائے تاکہ ملازمین واٹربورڈ یکسوئی کے ساتھ اپنے فرائض سرانجام دے سکیں ، تمام افواہوں کا خاتمہ ہو ،یہ بات سب کے عمل میں ہے کہ شہر میں لاک ڈاون کے باعث دفاتر فیکٹریاں ، کاروبار بند ہونے کے باعث واٹربورڈ کی ٹیکس ریکوری شدید متاثر ہوئی ، اس سبب واٹربورڈ جو اپنے ملازمین کو ہر ماہ کی پہلی تاریخ سے تنخواہوں کی ادائیگی شروع کردیتا تھا شدید مالی مشکلات سے دوچار ہوگیا ،اپریل کی تنخواہوں کی ادائیگی کیلئے مناسب فنڈز نہ ہونے کے باعث تنخواہیں مقررہ تاریخ پر ادا نہیں کی جاسکیں۔
ایم ڈی واٹربورڈ جناب اسداللہ خان کو اس صورتحال کا پیشگی اندازہ ہوگیا تھا، جس پر ایم ڈی صاحب نے فنانس ڈپارٹمنٹ اور آرآرجی کے افسران کو فوری ضروری اقدامات کی ہدایات جاری کیں ،ایم ڈ ی واٹربورڈ اسداللہ خان صاحب ،فنانس اور آرآر جی ڈپارٹمنٹ نے اپنے تئیں تمام تر کوششیں کی،اس ضمن میں حکومت سندھ کو ماہ اپریل کی تنخواہوں کی ادائیگی کیلئے ہنگامی بنیادوں پر مکتوب لکھا گیا اور ایک سمری تیار کرکے وزیربلدیات وچیئرمین واٹربورڈ سید ناصرحسین شاہ صاحب کے توسط سے تمام مراحل برق رفتاری سے طے کرواتے ہوئے ایم ڈی صاحب نے حتمی منظوری کیلئے وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ صاحب کو پیش کی اور الحمدللہ منظوربھی کرائی ،بعدازاں دیگرضروری پروسس کو جلد از جلد مکمل کرانے کیلئے ایم ڈی صاحب ازخودبھرپورکوششیں کررہے ہیں ،روزانہ صبح سے شام تک روزہ کی حالت میں محکمہ مالیات سمیت دیگر مختلف دفاتر کے چکر لگارہے ہیں ،توقع ہے کہ ایک سے دو روز میں رقم واٹربورڈ کے اکاونٹ میں منتقل ہونے کے بعد بقیہ ملازمین کو بھی تنخواہوں کی ادائیگی کردی جائے گی ،اس ہی اثنا میں ایم ڈی صاحب ماہ مئی کی ایڈوانس تنخواہوں کی ادائیگی کیلئے سمری منظورکرانے کی بھی بھرپورکوششیں کررہے ہیں،جبکہ لیو انکیشمنٹ کی ادائیگی کے حوالے سے چند وضاحتیں ضروری ہیں ،حکومت سندھ نے لاک ڈاون کے نفاذ کے فوری بعد تمام صوبائی اداروں پر تنخواہ اور پینشن کی ادئیگی کے سواتمام تر ادائیگیوں پر بین لگادی ہے، اس کا باقاعدہ نوٹیفکشن23مارچ کو جاری ہوا ،بعدا زاں محکمہ بلدیات نے بھی14اپریل کو ایک مکتوب کے ذریعے اس پابندی کی توثیق کی ،اس صورتحال پر بھی ایم ڈی صاحب نے تکیہ نہیں کیا بلکہ فوری طور پر سیکریٹری لوکل گورنمنٹ کو ایک مکتوب روانہ کیا جس میں واضح طور پر کہاگیا کہ واٹربورڈ سال کے 365دن 24گھنٹے شہریوں کو فراہمی ونکاسی آب کی سہولت فراہم کرنے والا ادارہ ہے ، واٹربورڈ کے محنت کش اور فرض شناس ملازمین شہر میں تیزی سے کورونا وباکے پھیلاو کے باوجو د اپنی جان جوکھوں میں ڈال کر شہریوں کو خدمت کررہے ہیں، اس کے علاوہ واٹربورڈ ملازمین کی جانب سے شہریوں کو کورونا کی وباسے بچانے کیلئے بھی مثالی اقدامات کیئے گئے ، انہیں سی بی اے سے کئے گئے معاہدے کے مطابق ماہ رمضان میں لیوانکیشمنٹ کی ادائیگی ناگزیر ہے ،لیوانکیشمنٹ کی ادائیگی نہ ہونے سے ملازمین میں بے چینی پھیل رہی ہے،اس ضمن میں واٹربورڈ کی ٹریڈ یونینز کا احتجاج بھی روز بروز بڑھتا جارہا ہے ، بصورت دیگر ادارہ کے صنعتی امن اور فراہمی ونکاسی آب کے نظام کو نقصان پہنچنے کا خطرہ لاحق ہے ،ایم ڈی واٹربورڈ نے اس لیٹر میں مزید لکھا کہ اس صورتحال کا ادراک کرتے ہوئے حکومت سندھ کی جانب سے تنخواہوں اور پینش کے سوا دیگر ادائیگیوں پر عائد پابندی سے واٹربورڈ کو مستثنیٰ قرار دیا جائے ،
اس لیٹر پرتاحال کارروائی جاری ہے ، اس صورتحال سے ایم ڈی واٹربورڈ نے واٹربورڈ کی ٹریڈ یونینز بشمول سی سی بی اے کے عہدیداروں کے ساتھ گذشتہ دنوں منعقدہ اجلاس میں موجود جملہ مزدور رہنماوں کو تمام تر صورتحال سے آگاہ کردیا تھا ،ساتھ میں اس ضمن میں ایم ڈی صاحب ،فنانس و آر آر جی ڈپارٹمنٹ کی جاری کوششوں کو بیان کرتے ہوئے تمام تر مکتوب کی کاپیاں اور اس وقت تک کے اقدامات کے تحریری شواہد بطور ثبوت اجلاس کے شرکاءمیں تقسیم کردیئے گئے تھے ،موجودہ صورتحال میں واٹربورڈ سندھ حکومت کی جانب سے لگائی گئی پابندیوں کے باعث لیو انکیشمنٹ کی ادائیگی سے قاصر ہے، تاہم یہ بات خوش آئند ہے کہ ان پابندیوں سے واٹربورڈ کو مستثنیٰ قرار دینے کیلئے تمام تر کوششیں جاری ہیں اور خود ایم ڈی واٹربورڈ اسداللہ خان صاحب روزانہ کی بنیاد پر روزہ کی حالت میں صبح سے شام تک صوبائی حکومت کے متعلقہ محکموں اوردفاتر میں جا کر اس پابندی کو اٹھانے کی کوشش کررہے ہیں،
یہاں یہ بات واضح رہے کہ لیوانکیشمنٹ کی ادائیگی کیلئے ضروری فنڈز کے حصول کیلئے بھی اس ہی اثنا میں کوششیں کی جاری ہیں،

ایم ڈی صاحب کی بھرپور کوشش ہے کہ عید سے قبل واٹربورڈ ملازمین کو ماہ اپریل کے علاوہ ماہ مئی کی ایڈوانس تنخواہیں بھی اداکردی جائے اور لیوانکیشمنٹ کا اجراءبھی یقینی بنایا جائے ،
ملک و شہرکے حالات اور واٹربورڈ کو درپیش مالی مشکلات کی اس صورتحال کی ذمہ دار نہ واٹربورڈ انتظامیہ ہے ،نہ سی بی اے ،نہ ٹریڈیونینز ،نہ مزدور رہنما اور نہ ہی واٹربورڈ ملازمین، لہذا ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم آپس میں الجھنے اور الزام تراشیوں سے اجتناب برتیں، اپنے فرائض معمول کے مطابق اداکریں اور کسی بھی موقع پر صبر کا دامن ہاتھ سے نہ جانیں دیں،انشااللہ ایم ڈی واٹربورڈ کے اقدامات اور کوششوں کے جلد مثبت نتائج برآمد ہوں گے ۔
ترجمان واٹربورڈ