حکومت سے مطالبہ ہے کہ ورکشاپ کھول دینے چاہیے لیبر آئے گی تو ان کے گھر چلیں گے-سلیم گوڈیل ۔صدر PAMADA

سلیم گوڈیل ۔صدر PAMADA .

صدر پاکستان آٹو موبیل مینوفیکچرز ہینڈ ڈیلرز ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ حکومت سندھ نے لوگوں کی صحت کے تحفظ کے لیے جو اقدامات اٹھائے ہیں اس کی ہم تعریف کرتے ہیں کیوں کہ انسانی زندگی سے بڑھ کر کوئی چیز اہم نہیں ہوتی ۔ہمارے تقریبا 500 ڈیلرز ہیں پورے پاکستان میں ۔اور تقریبا پچاس ہزار کے قریب لوگ نوکری کر رہے ہیں

روزگار کما رہے ہیں اور اپنی فیملیز کو سپورٹ کر رہے ہیں میں خود ٹویوٹا ہونڈا سوزوکی اور کیا موٹرز کی نمائندگی کرتا ہوں ہمارے ملک بھر میں ڈیلرز ہیں پچھلے ڈیڑھ دو سال سے جب سے ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں کمی آئی ہے تو اس وجہ سے ہم سب کمپنیوں کی پروڈکشن آدھی رہ گئی جیسے ٹویوٹا موٹرز والے 50 ہزار گاڑیاں بنا رہے تھے وہ بیس ہزار گاڑیوں پر آگئے تھے اس طرح پورے ملک میں ڈیلرز نقصان میں چل رہے تھے کیش فلو کا پرابلم تھا تنخواہوں کی ادائیگی مسئلہ بن چکا تھا یہ پرابلم ہمیں پچھلے دو سال سے دیکھنا پڑ رہا تھا اوپر سے کرونا وائرس آگیا اس کی وجہ سے ہمارے پرابلم مزید بڑھ گئے پچھلے 45 دنوں سے لاک ڈاؤن ہے اور ہمارا کام بالکل بند ہے ہم سارے ڈیلرز تنخواہیں بھی باقاعدگی سے دے رہے ہیں کوئی اسٹاف نوکری سے نہیں نکالا گیا اب ہمیں حکومت کی جانب سے سپورٹ چاہیے ویسے بھی آپ دیکھیں جو ہماری کمپنیوں کے ڈیلرز ہیں ان کے اسٹینڈرز انٹرنیشنل لیول کے ہیں خاص طور پر جاپانی کمپنیاں ایس او پی فالو کرنے میں ثانی نہیں رکھتی ہمارے تمام لوگ احتیاطی تدابیر اختیار کرتے ہیں دستانے پہنتے ہیں ماسک پہنتے ہیں ۔ہماری حکومت سے گزارش ہے یقینی طور پر ہم سمجھتے ہیں انسانی زندگی سب سے اہم ہے لیکن کاروبار کرنا ہے لوگوں نے اپنے گھر چلانے ہیں ہمیں کیش فلو کا پرابلم آ رہا ہے تنخواہ ہم نے دو مہینے کی اپنے پاس سے دے دی ہے اسٹیٹ بینک نے جو قرضے تین فیصد پر دینے کا اعلان کر رکھا ہے وہ ہم نے درخواست دے دی ہوئی ہیں لیکن ابھی تک ملا کچھ نہیں ۔ہم نے اپنے پاس سے تنخواہ دے دی ہے ۔ہماری گزارش ہے کہ حکومت جب کسی پیکج کا اعلان کرتی ہے تو پہلے یہ دیکھ لیا کریں کہ اس پر عمل درآمد ہو سکتا ہے ہو رہا ہے یا نہیں ۔
اس کے علاوہ ہم اپوائنٹمنٹ کے تحت کام کرتے ہیں گاڑی اپوائنٹمنٹ کے تحت آتی ہے پبلک ڈیلنگ کا ہوتی ہے ورکشاپ میں چھ فٹ کے فاصلے کی ایس او پی پر ہم سختی سے عمل کرتے ہیں اس وقت ہم خود حکومت سے تعاون کر رہے ہیں کار اگر فروخت نہیں ہو رہی کوئی بات نہیں ہم آن لائن سیل بھی کر سکتے ہیں ۔پنجاب بلوچستان خیبر پی کے میں ورکشاپ کام کر رہے ۔

اس لیے حکومت سے مطالبہ ہے کہ ورکشاپ کھول دینے چاہیے لیبر آئے گی تو ان کے گھر چلیں گے ۔ہم بھی فرنٹ لائن سولجر سہی ہم کام کریں گے تو گاڑی بنانے والی کمپنی چلےگی اب تک ہمیں نہ تو بجلی کے بلوں کے حوالے سے کوئی ریلیف ملا ہے نہ کوئی اور ریلیف ملا ہے نہ ہی اسٹیٹ بینک کے وہ قرضہ جو تین فیصد یا چار فیصد مارک پر دینے کا اعلان ہوا وہ ہمیں ملے ہیں اب تک کچھ نہیں ملا

ہمارا سندھ حکومت سے مطالبہ ہے کہ جس طرح پنجاب نے ٹیکس زیرو کر دیا ہے سندھ حکومت بھی ایسا عربی ٹیکس ایک سال تک ہم سے وصول نہ کرے ۔تاکہ کچھ ہمیں ریلیف ملے کی کیش فلو میں کچھ سہولت ملے
from-abbtak-tv-show