نوازشریف 500 ملین ڈالر تو دور کی بات پانچ سو روپے کا نوٹ بھی نہیں دے کر گئے ورنہ عمران خان لڈیاں ڈالتے

پاکستان کے سینئر صحافی اور تجزیہ نگار سید طلعت حسین نے کہا ہے کہ سابق وزیراعظم نواز شریف نے پاکستان سے باہر جانے کے لیے 500ملین ڈالر تو بہت دور کی بات پانچ سو روپے کا ایک نوٹ بھی عمران خان کی حکومت کے حوالے نہیں کیا اگر نواز شریف جاتے ہوئے پانچ سو روپے کا ایک نوٹ ہی وزیراعظم کو دے جاتے تو عمران خان لڈیا ں ڈالتے اور بار بار پریس کانفرنس کرکے نواز شریف کا ستیاناس کر دیتے ۔
اپنے پروگرام میں عوامی سوالات کا جواب دیتے ہوئے سید طلعت حسین نے کہا کہ ہارون رشید کی معلومات درست نہیں لگتی وہ میرے بڑے ہیں میرے ان سے اچھے دوستانہ تعلقات ہیں ان کا بہت احترام کرتا ہوں لیکن ان کا یہ کہنا کہ نوازشریف 500ملین ڈالر دے کر باہر چلے گئے ہیں بہت عجیب سی بات لگتی ہے اگر انہوں نے کوئی ایسا کھوج لگا لیا ہے جس کے بارے میں نہ وزیراعظم کو پتہ ہے نا گورنر اسٹیٹ بینک کو کچھ پتہ ہے نہ وہ رقم سرکاری کھاتے میں آئی ہے تو پھر وہ رقم گئی کہاں ۔اگر کسی پر کوئی خاص کیفیت میں کوئی خاص بات نازل ہوئی ہو تو میں نہیں کہہ سکتا یہ بات ہنسنے کی ہے 500ملین ڈالر تو بہت بڑی رقم ہے یہاں تو پانچ فیصد بھی اگر حکومت کے ہاتھ لگ جائے تو لوگ اچھلنے کودنے لگتے ہیں ۔

طلعت حسین نے کہا کہ ہارون رشید صاحب کو بتانا چاہیے کہ اسٹیٹ بینک کی رپورٹ درست ہوجائیں وہ رقم کہا ہے کس نے وصول کی کہا دیں گی تاکہ وہ کسی سرکاری کھاتے میں آجائے جتنا ہم نواز شریف عمران خان کو جانتے ہیں اگر نواز شریف 500 روپے کا ایک نوٹ بھی دے کر جاتے تو عمران خان نے آسمان سر پر اٹھا لینا تھا اور بار بار پریس کانفرنس کرکے نواز شریف کا ستیاناس کر دینا تھا ۔
طلعت حسین نے کہا کہ ہارون رشید کو غلط فہمی ہوئی ہے یا نہیں کسی نے غلط بتا دیا ہے ۔ہاں اتنا تو ہم بھی جانتے ہیں کہ جب نواز شریف کو باہر جانا تھا تو عمران خان ان کی میڈیکل رپورٹ پر مطمئن نہیں تھے چار جگہوں سے تصدیق کرائی گئی تھی اور اگر یہ سب ڈرامہ تھا تو پھر یہ سب اس ڈرامے کے حصے تھے عمران خان بھی پھر اس ڈرامے کا کردار تھے لہذا یہ تو ہنسی والی بات ہے اب اس ملک میں اگر صرف ڈرامہ ہو رہا ہے ۔نوازشریف کوئی رقم نہیں دے کر گئے اگر دیکھ کر جاتے تو کسی سرکاری کھاتے میں وہ رقم ظاہر ہوتی گورنر سٹیٹ بینک کو پتا ہوتا ۔