سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے ڈائریکٹر جنرل کے جرات مندانہ اقدامات سے غیر قانونی تعمیرات کرانے والا مافیا پریشان ۔ادارہ کی کالی بھیڑوں کی نیندیں حرام

سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے ڈائریکٹر جنرل نسیم الغنی سہتو کا کہنا ہے کہ حکومت سندھ نے مجھے ایڈیشنل چارج لے رکھا ہے اور میں اپنے فرائض پوری دیانتداری کے ساتھ انجام دے رہا ہوں غیر قانونی تعمیرات کرنے والا ایک مافیا پریشان ہو چکا ہے اور بوکھلاہٹ میں جھوٹی اور بے بنیاد خبریں پھیلا رہا ہے مجھے ان بے بنیاد خبروں کی کوئی پروا نہیں اپنا کام قانون کے مطابق انجام دیتا رہوں گا

میرا کیریئر اس بات کی گواہی دیتا ہے کہ نہ میں پہلے کبھی ڈمی بن کر کام کرتا رہا ہوں نہ آئندہ کبھی ڈمی بنوں گا ادارے میں ماضی میں جو غلط کام ہو رہے تھے ان کو آکر درست کیا ہے غیر قانونی کام کرنے والوں کی چیخیں نکل رہی ہیں اور وہ ادھر ادھر بھاگ رہے ہیں اور منفی پروپیگنڈا کر رہے ہیں ۔

دوسری طرف سے بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے اعلیٰ افسران نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ ڈائریکٹر جنرل کا چارج سنبھالنے کے بعد نسیم الغنی سہتو نے نہایت دلیری سے جرات مندانہ اقدامات اٹھائے ہیں اور غیر قانونی تعمیرات میں ملوث مافیا اور محکمے کی کالی بھیڑوں کی نیندیں حرام ہو چکی ہیں کچھ افسران کو ان کے عہدوں سے ہٹایا گیا ہے کچھ کے خلاف ایکشن ہوا ہے اور کچھ کے خلاف مزید ایکشن ہونے والا ہے اس لیے محکمے میں غلط طریقے سے عہدہ حاصل کرنے والوں اور غلط کاموں میں ملوث افسران اور عملے کی نیندیں حرام ہو چکی ہیں ۔

سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے ذمہ دار اور سنجیدہ افسران کا کہنا ہے کہ ادارے کی بدنامی کا باعث بننے والے افسران نے اپنی گردن بچانے کے لیے کچھ کالی بھیڑوں کو ساتھ ملا کر شہر میں کچھ جعلی این جی اوز اور کچھ میڈیا کے نمائندوں کو ساتھ ملا کر ایک پریشر گروپ بنا رکھا ہے جو ہر مرتبہ آنے والے ڈائریکٹر جنرل اور اعلی افسران کو دباؤ میں رکھنے کی کوشش کرتے ہیں اور بلیک میل کرتے ہیں لیکن موجودہ ڈی جی نہ تو پریشر میں آرہے ہیں نہ کسی بات پر بلیک میل ہو رہے ہیں اس لئے کافی عرصے سے سرگرم مافیا پہلی مرتبہ حقیقی طور پر پریشان نظر آرہا ہے