دو بھائی (قدیم داستان)

سُند اور اُپ سُند دونوں سگے بھائی تھے۔ دونوں ایک دوسرے پر جان چھڑکتے اور ایک پل کے لیے بھی جدا نہ ہوتے تھے۔

دونوں کے دل میں سمائی کہ ایسی زندگی حاصل کریں کہ موت کا ڈر نہ رہے۔ دونوں ایک چوٹی پر جاکر ریاضت میں مشغول ہوگئے۔ برسوں تک بھی جب کوئی دیوتا متوجہ نہ ہوا تو مسلسل ایک ٹانگ پر کھڑے رہ کر ریاضت کرنے لگے۔

برہما جی سے اُن کی یہ حالت نہ دیکھی گئی۔ انھوں نے خود دونوں کو وردان مانگنے کو کہا۔ دونوں یک زبان ہوکر بولے
مہاراج! ہماری مانگ بہت چھوٹی سی ہے۔ بس اتنی کہ کوئی ہتھیار ہم پر اثر نہ کرسکے اور ہم کسی دشمن کے ہاتھوں نہ مریں۔

برہما نے کہا، ”یہ ناممکن ہے، موت اٹل ہے۔“

اس پر دونوں نے سوچ کر کہا۔ ”ہمیں کوئی اور نہ مار سکے، اگر مرنا ہی ہے تو ہم بس ایک دوسرے کے ہاتھوں ہی مرسکیں۔“

برہما نے ان کی بات مان لی اور غائب ہو گئے۔ دونوں چوں کہ ایک دوسرے سے بے حد محبت کرتے تھے، اس لیے انہیں یقین ہوگیا کہ اب وہ امر ہیں اور دنیا میں کوئی ان کا کچھ نہیں بگاڑ سکتا۔ انھوں نے عہد کیا کہ خواہ کچھ ہو وہ آپس میں کبھی نہیں لڑیں گے۔

اب دونوں نے دنیا میں آفت برپا کردی۔ جس کو چاہتے مار ڈالتے، جس کو چاہتے بادشاہ بنا ڈالتے اور جس کو چاہتے ملک بدر کردیتے۔ ان کے غرور اور تکبر کا یہ عالم تھاکہ کسی کو خاطر میں نہ لاتے اور لوگوں کو طرح طرح سے ستاتے، تھوڑے ہی دنوں میں انھوں نے جور و جفا اور ظلم و تعدی کا ایسا بازار گرم کیا کہ لوگ ان کا نام سن کر کانوں پر ہاتھ رکھنے لگے۔

بالآخر سب برہما سے فریادی ہوئے۔ لوگوں کا حال سن کر برہما کو بہت دکھ ہوا، مگر وہ زبان دے چکے تھے۔ اب کیا ہوسکتا تھا۔

کافی سوچ بچار کے بعد برہما نے ایک حسین عورت کا روپ دے کر تلوتما کو دونوں بھائیوں کے پاس جانے اور ان کو رجھانے کا حکم دیا۔

تلوتما ان بھائیوں کے پاس پہنچی اور انھیں اپنے رقص کا کمال دکھانے لگی۔ تلوتما نظر اٹھاتی تو معلوم ہوتا بجلی گررہی ہے اور اٹھلا کے چلتی تو محسوس ہوتا بہار مسکرا رہی ہے۔

نوبت یہاں تک پہنچی کہ دونوں بھائی اس کی اداؤں پر فریفتہ ہوگئے۔ وہ ان دونوں کے بیچ آکر کھڑی ہوجاتی تو ایک طرف سُند اور دوسری طرف اُپ سُند اس کا ہاتھ تھام لیتے۔

سُند کا اصرار تھا کہ وہ بڑا ہے اس لیے خوب صورت عورت پر اس کا حق ہے۔ اُپ سُند کا کہنا تھا کہ بڑوں کا فرض ہے کہ چھوٹوں کی خوشی کا خیال رکھیں، اس لیے حسینہ اس کو ملنی چاہیے۔

تلوتما کا جادو چل چکا تھا۔ تکرار بڑھنے لگی اور دونوں ایک دوسرے کو مرنے مارنے پر تل گئے۔ جھگڑا بڑھ گیا اور دونوں نے ایک دوسرے پر وار کیا اور زمین خون سے سرخ ہوگئی۔ ان دونوں کی لاشیں زمین پر تڑپنے لگیں۔

برہما نے کہا، ”دیکھ لو، باہمی عداوت بڑے بڑے سورماؤں کو موت کے گھاٹ اتار دیتی ہے