منافع خوروں اورذخیرہ اندوزوں کے خلاف کریک ڈاؤن، 8 ہزار سے زائد گراں فروشوں و دوکانداروں کی چیکنگ اور 16 سو سے زائد پر 30 لاکھ روپے سے زائد کا جرمانہ عائد

کراچی  : وزیر اعلیٰ سندھ کے معاون خصوصی ڈاکٹر کھٹومل جیون کی ہدایت پر بیورو آف سپلائی اینڈ پرائسز کے افسران نے ضلعی انتظامیہ کے ساتھ مل کر صوبے بھر میں منافع خوروں اورذخیرہ اندوزوں کے خلاف کریک ڈاؤن کیا۔ ڈاکٹر کھٹو مل جیون نے کہا کہ ماہ رمضان کے آغاز سے آج تک صوبے بھر میں 8 ہزار 3 سو سے زائد کریانہ , گوشت و مرغی کی دکانوں, پھل و سبزی فروشوں اور دیگر اشیاءخوردونوش فروخت کرنے والوں کو چیک کیا گیا۔ سرکاری نرخ نامے کی عدم موجودگی اور ناجائز منافع خوری پر صوبے بھر کے 16 سو سے زائد گراں فروشوں اور دکانداروں پر 30 لاکھ روپے سے زائد کا جرمانہ عائد کیا گیا۔ واضح رہے کہ صرف گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران صوبے بھر میں 1 ہزار 9 سو سے زائد دکانوں، پھل و سبزیاں فروش اور دیگر اشیاءخوردونوش فروخت کرنے والوں کو چیک کیا گیا اور سرکاری نرخ نامے کی عدم موجودگی اور ناجائز منافع خوری پر صوبے بھر کے 3 سو 90 سے زائد گراں فروشوں اور دکانداروں پر 6 لاکھ 8 سو روپے سے زائد کا جرمانہ عائد کیا گیا۔ آج کراچی ڈویژن میں 89 منافع خوروں پر 4 لاکھ 8 سو روپے سے زائد کا جرمانہ عائد کیا گیا جبکہ صوبے کے دیگر اضلاع میں 3 سو سے زائد منافع خوروں پر 2 لاکھ روپے سے زائد کا جرمانہ بھی عائد کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ ڈائریکٹر بیورو آف سپلائی اینڈ پرائسیز کے دفتر میں قائم مرکزی شکایتی سیل صبح 9 بجے سے افطار کے وقت تک کام کررہا ہے۔ عوام اپنی شکایات بزریعہ ٹیلیفون نمبر 021.99244608 اور ای میل ایڈریس bspadprices@gmail.com پر درج کروا سکتے ہے۔ اس کے علاوہ ضلعی انتظامیہ کے تحت بھی شکایتی مراکز کام کر رہے ہیں۔ جہاں پر بھی عوام اپنی شکایات درج کرواسکتے ہیں۔ ڈاکٹر کھٹومل جیون نے کہا کہ ناجائز منافع خوروں, ذخیرہ اندوزوں اور غیر معیاری اشیاءفروخت کرنے والوں کو چالان کرنے کے ساتھ گرفتار بھی کیا جائے۔