چائینیز گروپ ھونزو جنجیانگ کی جانب سے امدادی سامان سندھ کے حوالے

کراچی 23 اپریلسندھ سالڈویسٹ مینیجمنٹ بورڈ کے ساتھ کام کرنےوالی چائینیز گروپ ھونزو جنجیانگ کی جانب سے امدادی سامان وزیر بلدیات سندھ سیدناصرحسین شاہ کے حوالے کیا گیا۔امدادی سامان میں میڈیکل ماسک، میڈیکل دستانے، ٹیمپریچر چیک کرنے والی مشینیں، وائرس ڈیٹیکشن کٹس، حفاظتی سوٹ، اسپرے مشینیں شامل ہیں۔ اس موقع پرسیکریٹری بلدیات روشن علی شیخ بھی موجود تھے۔

چینی وفد کے نمائندے نے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ چین اس موقع پر پاکستان کو کبھی تنہا نہیں چھوڑے گا اور اس وقت تک پاکستان کی مدد کرتا رہے گا جب تک کورونا کا آ خری مریض بھی صحت یاب نہیں ہوجاتا۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوۓ سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ پاکستان اور چین کی دوستی لازوال ہے اور یہ ہمالیہ پہاڑ سے بھی اونچی ہے چین نے اس موقع پر بھی ہمارا خیال رکھا ہے اور اور صحت مند رکھنے کے لئے پاکستانی عوام کو حفاظتی کٹس اور دیگر سامان مہیا کیا ہے ہم ان کے تہہ دل سے شکر گزار ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ یہ سامان ایس آئی یو ٹی کے حوالے کیا جائے گا۔ دریں اثنا صوبائی وزیر اطلاعات سید ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ تاجروں کو لوگوں کی خلاف ورزی پر اکسانے والوں کے خلاف حکومت سندھ سندھ کارروائی کرے گی ۔ سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ کہ جن دکانوں کو کام کرنے کی اجازت دی گئی ہے وہی دکانیں کھولی جائیں گی۔ یہ بات انہوں نے آج اپنے جاری ہونے والے والے ایک بیان میں کہی ۔ انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت عوام کی صحت پر کوئی سمجھوتہ نہیں کر سکتی کورونا وائرس ایک حقیقت ہے اور ہمیں اس بات کو سمجھنا ہوگا پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن فن اور محکمہ صحت سندھ کے مطابق مئی میں کے وسط اور آخر میں اس وباء میں شدت آنے کا اندیشہ ہے جس کی وجہ سے سے ہمیں میں اس سے بچنے کے لئے لیے صرف اور صرف احتیاط کرنی ہوگی ۔ انہوں نے کہا کہ کچھ لوگ اس وقت بھی سیاست کرنے میں لگے ہوئے ہیں ہیں اور تاجروں اور دکانداروں کو اس مشکل وقت میں حکومت کے خلاف اکسا رہے ہیں ان کو بھی یہ سمجھنا چاہیے کہ کہ اس طرح سے سے یہ و باءتیزی سے پھیلنے کا خطرہ ہے اور ایک دفعہ یہ کنٹرول سے باہر ہو گئی گی کا بہت بڑا نقصان ہوگا ۔ کاروبار اور معیشت تو بحال ہوسکتی ہے لیکن لوگوں کی زندگی واپس نہیں آسکتی۔ سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ کہ چھوٹے دکانداروں کو ٹیکسز میں رعایت اور دیگر سہولتیں دینے پر غور کیا جارہا ہے۔ لیکن اس وقت کاروبارکھولنے کا فیصلہ دانشمندانہ اقدام نہیں ہے۔ سندھ حکومت پر تجارتی مراکز کھولنے کے لیے تاجروں کی طرف سے دباؤ ہے لیکن حکومت سندھ نے فیصلہ کیا ہے کہ رفتہ رفتہ حالات کے تناظر میں تجارتی سرگرمیاں بحال کی جائیں گی۔