وطن عزیز کے کم عمرترین سماجی ورکر شہریار عاطف کی جیوے پاکستان کے ساتھ خصوصی گفتگو، ملاقات وحید جنگ

جیسا کہ آپ جانتے ہیں کہ پروگرام ملاقات میں ہم آپ کو ایسے لوگوں سے ملواتے ہیں جن کی وطن عزیز کے لئے خدمات ہیں اور جو لوگ اپنے اپنے شعبہ میں نہایت نمایاں خدمات انجام دے رہے ہیں اسی حوالے سے آج ہم آپ کی ملاقات وطن عزیز کے کم عمرترین سماجی ورکر سے کرارہے ہیں جن کا نام ہے شہریار عاطف۔
انہوں نے کرونا کے حوالے سے میدان عمل میں شاندار کام کیا ہے اور سوشل سیکٹر میں امدادی سامان کی فراہمی سینٹ ایزد کی فراہمی کے حوالے سے لیکر ضروریات زندگی کی دستیابی یقینی بنانے کے لیے اقدامات اور کوششیں کر رہے ہیں ۔
ایک خصوصی ملاقات نے شہریار عاطف نے بتایا کہ ابھی وہ اسکول میں پڑھ رہے ہیں اور اب نائنتھ میں جائیں گے انہوں نے ایک این جی او بنا رکھی ہے جس کا نام ہوپ فار ٹو مارو ۔ان کا کہنا ہے کہ ہمارا مذہب بھی یہی کہتا ہے کہ مایوسی کفر ہے اس لیے لوگوں کو امید دلاکر ان کو بہتر زندگی کی طرف لانا چاہیے ۔
اس سوال پر کے آپ کو یہ این جی او بنانے کا خیال کیسے آیا اور اس بینر کے نیچے کیا کام کر رہے ہیں ۔

انہوں نے بتایا کہ جب کرونا کا معاملہ اٹھا تو ہم نے دیکھا کہ ایسے بچے ہیں جن کو ماسک دستانے سینیٹائزر نہیں پہنچ رہا تو میں نے اپنے دوستوں کے ساتھ مل کر فیصلہ کیا کہ ہم لوگو ں تک یہ چیزیں پہنچائیں اس سلسلے میں میرے والدین نے بہت سپورٹ کیا اور میرے والدین چاہتے ہیں کہ کمیونٹی ویلفیئر کے لئے کام کیا جائے اس طرح اپنے دوستوں کے ساتھ مل کر میں پہلے بھی ایک پروجیکٹ پر کام کر چکا تھا وہ ایک چھوٹا پروجیکٹ تھا لیکن وہ اسے تجربہ ملا ۔اپنے بہن بھائیوں کے حوالے سے سوال پر انہوں نے بتایا کہ میرے دو بھائی اور ایک بہن ہے اور بہن اس وقت لاہور میں ہے ایک ڈاؤن کی وجہ سے ۔
انہوں نے بتایا کہ ہم نے غریب کچی بستیوں میں جا کر بچوں کی مدد کی ہے وہاں لوگوں کو راشن اور بریانی اور سینیٹایزر وغیرہ تقسیم کرکے آئے اسی طرح یہ کام جاری رکھا ہوا ہے اور مستحق لوگوں تک مدد کرنا اصل مقصد ہے ایک اور سوال پر انہوں نے بتایا کہ ابھی تو فنڈز اپنے پاس سے جمع کرکے چیزیں فراہم کر رہا ہوں آگے چل کر لوگ ہمارے ساتھ شامل ہونا چاہتے ہیں ڈونیشن دینا چاہتے ہیں پھر ان کے ساتھ ملا کر کام کریں گے انہوں نے کہا کہ ہمیں اپنے لوگوں پر فخر ہے پاکستان کے لوگ بہت فراخ دل ہیں ہمدرد ہیں لوگ دل کھول کر دوسروں کی مدد کرتے ہیں ان کاموں پر اللہ بھی خوش ہوتا ہے ۔
ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ کرونا کے دنوں میں جو ڈاکٹر اور میڈیکل عملہ کام کر رہا ہے خدمات انجام دے رہا ہے وہ بہت بہادر لوگ ہی قابل تحسین ہیں ہمارے ہیرو ہیں ۔